Results 1 to 6 of 6

Thread: اچانک کی عید مبارک

  1. #1

    اچانک کی عید مبارک

    السلام علیکم
    امید ہے سب بخیر و عافیت ہوں گے۔۔ان شاء اللہ
    ون اردو کے تمام اراکین کو دل کی گہرائیوں سے اچانک ہو جانے والی عید مبارک۔۔وہ عید جس کا علم ہی رات ساڑھے گیارہ بجے ہوا۔۔
    اللہ پاک سے دعا ہے کہ ہم سب کی عبادات قبول فرمائے۔۔۔اور عید کی سچی خوشیاں ہمیں نصیب فرمائے،۔۔آمین

  2. #2
    Sisters Society

    Join Date
    Feb 2008
    Location
    Karachi
    Posts
    56,245
    Blog Entries
    27
    میری طرف سے بھی یہ عید سب کو مبارک ہو۔
    ہاں اب سمجھ آیا کہ مفتی منیب الرحمان کو اتنی عجلت میں کیوں برطرف کیا گیا،ملک میں ایک عید کرنے کا یہ مطلب ہرگز نہیں ہونا چاہیے کہ ایک روزہ کم کر دیا جائے۔غلط کو ٹھیک کرنا چاہیے نہ کہ غلط کے ساتھ مل کر اسے صحیح ثابت کر دیا جائے۔

  3. #3
    Sisters Society

    Join Date
    Feb 2008
    Location
    Karachi
    Posts
    56,245
    Blog Entries
    27
    اختلاف اس پر بھی قوم میں پایا گیا
    چاند خود نکلا تھا یا جبراً نکلوایا گیا

  4. #4
    Sisters Society

    Join Date
    Feb 2008
    Location
    Karachi
    Posts
    56,245
    Blog Entries
    27
    رویت ہلال کمیٹی کے سابق چیئرمین مفتی منیب کے بعد موجودہ مرکزی رویت ہلال کمیٹی کے رکن اور جامعہ نعیمیہ کے سربراہ مولانا راغب نعیمی کا بھی قضا روزے سے متعلق بیان سامنے آگیا۔


    گزشتہ رات تقریباً ساڑھے 11 بجے عید کا چاند نظر آنے کے اعلان پر پوری قوم حیران ہے، کئی افراد یقین کرنے کو تیار نہیں ہیں جبکہ مرکزی رویت ہلال کمیٹی کے رکن مفتی یاسین ظفر کی ویڈیو نے معاملہ مزید پیچیدہ کر دیا ہے۔


    کراچی کے فیڈرل بی ایریا کے ٹی گراؤنڈ میں رویت ہلال کمیٹی کے سابق چیئرمین مفتی منیب الرحمان نے نمازعیدالفطر پڑھائی۔


    عید کی نماز کے بیان میں مفتی منیب الرحمان نے لوگوں سے ایک قضا روزہ رکھنے اور اعتکاف کرنے والوں کو ایک روزکا قضا اعتکاف کرنے کا کہا۔






    بعدازاں میڈیا سے گفتگو میں مفتی منیب کا کہنا تھاکہ تمام افراد ایک قضا روزہ رکھیں اور جو افراد اعتکاف سے اٹھے ہیں وہ ایک روز کا اعتکاف کریں۔


    دوسری جانب مرکزی رویت ہلال کمیٹی کے رکن اور جامعہ نعیمیہ کے سربراہ مولانا راغب نعیمی کا بیان بھی سامنے آیا ہے۔


    راغب نعیمی کا کہنا ہے کہ 1967 میں جمعہ کو عید آنے پر رویت ہلال سے جمعرات کو عید کروائی گئی، اُس وقت 5 بڑےعلماء نے فیصلے سے انکار کیا تو انہیں دو ماہ مچھ جیل میں رکھا گیا۔


    ان کا کہنا تھاکہ مفتی الیاس اور مفتی منیب سمیت دیگر علماء کا ماننا ہے کہ عید کروانے کی ذمہ داری حکومت پرہوتی ہے لہٰذا شرعی طور پر جمعہ کو چھوڑ کر ایک روزے کی قضا کرلی جائے۔

  5. #5
    Sisters Society

    Join Date
    Feb 2008
    Location
    Karachi
    Posts
    56,245
    Blog Entries
    27
    ریڈیو نے 10 بجے شب کے خبر دی عید کی
    عالموں نے رات بھر اِس نیوز کی تردید کی

    ریڈیو کہتا تھا سن لو کل ہماری عید ہے
    اور عالم کہتے تھے یہ غیر شرعی عید ہے

    دو دھڑوں میں بٹ گئے تھے ملک کے سارے عوام
    اِک طرف سب مقتدی تھے، اِک طرف سارے امام

    بیٹا کہتا تھا کہ کل شیطان روزہ رکھے گا
    باپ بولا: "تیرا ابا جان روزہ رکھے گا"

    بیٹا کہتا تھا کہ میں سرکاری افسر ہوں جناب
    روزہ رکھوں گا تو مجھ سے مانگا جائے گا جواب

    باپ یہ کہتا تھا پھر یوں بام پر ایماں کے چڑھ
    روزہ بھی رکھ اور روزے میں نمازِ عید پڑھ

    آج کتنا فرق فل اسٹاپ اور کامے میں تھا
    باپ کا روزہ تھا بیٹا عید کے جامے میں تھا

    اختلاف اِس بات پر بھی قوم میں پایا گیا
    چاند خود نکلا تھا یا جبراً نکلوایا گیا
    دلاور فگار

  6. #6
    Senior Member

    Join Date
    Sep 2007
    Posts
    91,815
    Blog Entries
    32

    ون اردو کے تمام اراکین کو دل کی گہرائیوں سے عید مبارک۔۔

    اللہ پاک سے دعا ہے کہ ہم سب کی عبادات قبول فرمائے اور عید کی سچی خوشیاں ہمیں نصیب فرمائے. آمین


Bookmarks

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •