Pardaisi

اور تُو ہے کہ سدا آئینہ خانے مانگے

Rate this Entry
قربتوں میں بھی جدائی کے زمانے مانگے
دل وہ بے مہر کہ رونے کے بہانے مانگے


ہم نہ ہوتے تو کسی اور کے چرچے ہوتے
خلقتِ شہر تو کہنے کو فسانے مانگے


یہی دل تھا کہ ترستا تھا مراسم کے لئے
اب یہی ترکِ تعلق کے بہانے مانگے


اپنا یہ حال کہ جی ہار چکے لٹ بھی چکے
اور محبت وہی انداز پرانے مانگے


زندگی ہم ترے داغوں سے رہے شرمندہ
اور تُو ہے کہ سدا آئینہ خانے مانگے


دل کسی حال پہ قانع ہی نہیں جانِ فراز
مِل گئے تم بھی تو کیا اور نہ جانے مانگے


۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
احمد فراز

Submit "اور تُو ہے کہ سدا آئینہ خانے مانگے" to Digg Submit "اور تُو ہے کہ سدا آئینہ خانے مانگے" to del.icio.us Submit "اور تُو ہے کہ سدا آئینہ خانے مانگے" to StumbleUpon Submit "اور تُو ہے کہ سدا آئینہ خانے مانگے" to Google

Categories
Uncategorized

Comments