چور ، شکاری ، لکڑہارا، سادھو، جوگی، شاعر
کون تمہارے ہاں سے لوٹا خالی ہاتھ درختو


ہجر کے جنگل میں آئی ہے پہلی رات درختو
کتنا سناٹا ہے ، چھیڑو کوئی بات درختو


ساری عمر کھڑے رہتے ہو تم بانہیں پھیلائے
کب اور کس جانب سے آتی ہے خیرات درختو


گہری شام ہو، اور نہ کوئی پنچھی لوٹ کے آئے
کیسے ظاہر کرتے ہو اپنے جذبات درختو


تم کو رونا تو آتا ہوگا اپنی خاموشی پر
جب انسان لگاتے ہیں ٹہنیوں پر گھات درختو


چور، شکاری، لکڑہارا، سادھو، جوگی، شاعر
کون تمہارے ہاں سے لوٹا خالی ہاتھ درختو


اچھا ، یہ نوکیلے کانٹے ہیں یا ساکت چیخیں؟
اور یہ رنگیں پھول ہیں یا جامد نغمات درختو


میں نے کتنی باتیں کی ہیں لیکن تم نہ بولے
ہاں، ہاں کیا اسلم؟ کیا اسلم کی اوقات درختو


اسلم کولسری