Movie Debate : Arrival


سائنس فکشن موویز کے چاہنے والوں نے اگر آرائیول نہیں دیکھی تو ان کا عشق ادھورا ہے۔۔۔یہ فلم امریکن سائنس فکشن مصنف ٹیڈ چیانگ کے ناول "اسٹوری آف یور لائف" پر بنائی گئی ہے۔۔۔
اگر آپ نے یہ فلم نہیں دیکھ رکھی تو یہیں سے لوٹ جائیں پہلے فلم دیکھیں پھر ڈیبیٹ پڑھیں۔۔۔کیوں کہ اس ڈیبیٹ میں فلم کی کہانی کا سسپنس بھی کھول دیا جانا ہے۔۔۔ڈیبیٹ پڑھنے کے بعد اگر آپ پہلی بار فلم دیکھیں تو شاید آپ فلم انجوائے نہ کر سکیں۔۔
بات کرتے ہیں فلم کی کہانی کی.

" لوئس بنک ایک یونیورسٹی میں لیکچرر ہے ۔۔لوئس بنک نامی عورت کی بیٹی چھوٹی عمر میں ہی ایک نامعلوم اور ناقابل علاج بیماری کا شکار ہو کر مر جاتی ہے۔۔ایسے ہی ایک دن وہ یونیورسٹی آتی ہے تو علم ہوتا ہے کہ دنیا بھر میں بارہ مختلف مقامات پر نامعلوم قسم کے عجیب وغریب اسپیس شپ لینڈ ہوئے ہیں۔۔پتا چلتا ہے کہ اسپیس شپس پر دوسری دنیا ہے ایلین نے زمین پر قدم رکھا ہے۔۔۔ایسے میں ایک اسپیس شپ امریکہ میں بھی لینڈ ہوا ہے۔۔جس میں ایلین موجود ہیں جو کہ اسپیس شپ سے باہر نہیں آئے۔۔۔
امریکی آرمی جنرل کرنل ویبر ایسے میں لوئس بنک اور فزکس کے ایک ماہر این ڈونلی کو مدد کے لیے ہائر کرتے ہیں کہ آپ ایلین سے بات کریں ان سے کمیونیکشن کریں پوچھ کر بتائیں ان کا زمین پر آنے کا مقصد کیا ہے۔۔۔
لوئس اور این مل کر اسپیس شپ میں جاتے ہیں سات ٹانگوں والے ایلین سے بات کرنے کی کوشش کرتے ہیں جنھیں یہ اس کی سات ٹانگوں کی وجہ سے "ہپٹو پوڈ " کا خطاب دیتے ہیں۔۔جبکہ این ان دو ایلیز کو ایبٹ اور کاسٹیلو کا نام دیتا ہے۔۔
جب بھی لوئس اور این ، ایلیز سے باتیں کرتے ہیں ان کے درمیاں ایک بڑا سا شیشہ حائل ہوتا ہے۔۔۔
ایلین کو انگلش یا کسی قسم کی کوئی بھی زمینی زبان نہیں آتی۔۔وہ عجیب وغریب سمبلز (نشان) کو شیشے پر بناتے ہیں۔۔وہ عجیب و غریب نشان ہی ان کی زبان ہوتی ہے وہ ان نشانوں کی مدد سے انسانوں سے بات کرنے کی کوشش کر رہے ہوتے ہیں۔۔۔این اور لوئس روزانہ اسپیس شپ میں جاتے ہیں ان نشانوں کو نوٹ کر کے واپس آرمی کیمپ میں آ جاتے ہیں اور پھر لوئس ان نشانوں پر ریسرچ کرتی ہے کہ ایلیز ہم سے کیا کہنا چاہتے ہیں۔۔اسی ریسرچ کے دوران اسے خیالات آتے ہیں کہ اس کی بیٹی جو مر چکی ہے وہ اس سے اپنے باپ کے بارے پوچھتی ہے کہ میرے باپ نے ہمیں کیوں چھوڑا۔۔
لوئس کو ایلینز کی زبان کچھ کچھ سمجھ آنا شروع ہو جاتی ہے۔۔۔وہ ایلینز سے پوچھتی ہے کہ "تم زمین پر کیوں آئے ہو۔۔" وہ نشان ڈرا کر کے جو جواب دیتے ہیں اسکا ترجمہ لوئس یہ کرتی ہے "آفر ویپن یعنی ہتھیار دینے۔۔"
لیکن ان نشانوں کا ترجمہ چائنہ والا جہاں پر بھی ایک اسپیس شپ موجود ہے اس میں بھی ایلینز ہیں ترجمہ کرتے ہیں" یوز ویپن یعنی ہتھیار استعمال کرنے۔۔"
چائنہ والے اس میسج کے بعد فورا ایلینز سے رابطہ توڑ کر جنگی پوزیشن میں آ جاتے ہیں اور سوائے امریکہ کے باقی دس ملک بھی چائنہ کا ساتھ دیتے ہیں اور اپنے اپنے ملک میں موجود اسپیس شپ میں موجود ایلینز سے رابطہ توڑ دیتے ہیں۔۔اور جنگی پوزیشن میں آ جاتے ہیں۔۔

لوئس اس بات پر مزید ریسرچ اور بحث کرتی ہے کہ ایلینز یعنی خلائی مخلوق نے جو لفظ ویپن ڈرا کیا ہے اس کا مطلب ٹول بھی ہو سکتا ہے کہ وہ ہمیں کوئی ٹول دینے آئے ہیں۔۔
امریکی فوج بھی باقی ممالک کی طرح ایلینز سے رابطہ توڑنے پر آمادہ ہو جاتی ہے اور جنگی پوزیشن میں آ جاتی ہے۔۔امریکی فوجی اسپیس کرافٹ میں بم فکس کر دیتے ہیں۔۔لوئس بنک اور این کو اس چیز کا علم نہیں ہوتا کہ اسپیس کرافٹ میں بم فکس ہے وہ آرمی کی مرضی کے خلاف اسپیس کرافٹ میں داخل ہوتے ہیں۔۔۔اس بار خلائی مخلوق انھیں چھوٹے موٹے نشان کی بجائے لمبے لمبے نشان ڈرا کر کے ایک بڑا سا پیغام دیتے ہیں۔۔اسی وقت بم پھٹ جاتا ہے۔۔خلائی مخلوق جس کا نام ایبٹ رکھا گیا ہوتاہے وہ لوئس بک اور این کو بے ہوش کر اسپیس کرافٹ سے باہر دھیکل دیتا ہے ایسے ان کی جان بچ جاتی ہے۔۔۔
جب لوئس کو ہوش آتا ہے تو دیکھتے ہیں کہ امریکی فوج اس اسپیس کرافٹ پر ایک بڑے حملے کی تیاری کر رہی ہے اور یہ سب اس پیغام کا نتیجہ ہے جس کے تحت انھوں نے لفظ ٹول کو ہتھیار پڑھا اور آفر کو یوز پڑھا یعنی ہم ہتھیار استعمال کرنے آئے ہیں۔۔
اسی وقت ایلن نوٹ کرتا ہے کہ اس بات جو میسج ایلینز نے دیا ہے وہ ادھورا یا ناقابل فہم ہے۔۔یہ اسی صورت قابل فہم ہو گا جب بارہ ممالک جہاں اسپیس شپ اترے ہیں یہ سب بھی اپنے اپنے حاصل کردہ میسج شیئر کریں یعنی خلائی مخلوق چاہتی ہے کہ یہ بارہ ممالک جہاں جہاں اسپیس شپ اترے ہیں آپس میں ایک دوسرے سے تعاون کریں۔۔ اور ایک دوسرے کو بتائیں کہ ایلینز سے باتیں کر کر کے انھوں نے ان کی زبان میں سے کیا کیا سیکھا۔۔
ادھر چائنہ کا غصہ کسی صورت کم ہونے میں نہیں آ رہا انھوں نے خلائی مخلوق کو چوبیس گھنٹے کی وارننگ ایشو کر دی ہے کہ چوبیس گھنٹے میں زمین چھوڑ جائیں۔۔۔ورنہ نتائج سنگین ہوں گے۔۔روس، پاکستان اور سوڈان جہاں پر بھی اسپیس شپ لینڈ ہوا ہے وہ بھی اپنے اپنے ایلیز کو یہی وارننگ دیتے ہیں۔۔
لوئس بنک اکیلی دوبارہ اسپیش سپ میں جاتی ہے۔۔ایلیز اسے گھسنے دیتے ہیں وہاں اس بار اس کا سامنا بس ایک ہی ایلین سے ہوتا ہے جس کا نام کوسٹیلو رکھا گیا تھا۔۔کوسٹیلو بتاتا ہے کہ بم دھماکے سے لوئس اور این کو بچانے کے چکروں میں ایبٹ شدید زخمی ہے اور وہ مر رہا ہے۔۔۔اس وقت وہ ایک میسج مزید دیتا ہے
"ویپن اوپنز ٹائم Weapon Open Time."
یعنی جو ہتھیار ہم تمہیں دے رہے ہیں وہ تمہیں ٹائم کو سمجھنے میں مدد دے گا۔۔۔
اب یہاں سے غور سے پڑھیں

وہیں لوئس بنک کو پتا چلتا ہے کہ ویپن یعنی ہتھیار سے مراد خلائی مخلوق کی زبان ہے ۔۔وہ زبان پر زمین کے باسیوں کو اپنی زبان سکھانے آیے تھے ۔کیوں کہ تین ہزار سال بعد ایلینز ایک نامعلوم مشکلات کا شکار ہونے والے ہیں اس وقت انھیں اس مشکل سے نبٹنے کے لیے زمین کے انسانوں کی مدد درکار ہو گی اور یہ مدد اسی وقت ممکن ہو سکے گی جب زمین کے انسانوں کو خلائی مخوق یعنی ایلینز کی زبان آتی ہو گی۔۔۔یہیں پر لوئس کو پتا چلتا ہے کہ نا صرف خلائی مخلوق مستقبل میں جھانل سکتے ہیں بلکہ ان کی زبان جاننے کے بعد اب وہ بھی لینیئر ٹائم نہیں رہتی وہ بھی م بذات خود بھی مستقبل میں جھانک سکتی ہے۔۔۔اپنی بیٹی اینا کے بارے جو اسے خیالات آتے ہیں یا جو اینا کے بارے سارے خیالات تھے کہ وہ بیماری سے مر چکی ہے اور مرنے سے پہلے اپنے باپ کے بارے پوچھتی رہی ہے دراصل یہ ابھی ہوا ہی نہیں۔۔یہ سب مستقبل میں ہونے والا ہے۔۔مستقبل میں اس کی شادی ہو گی۔۔اس کی بیٹی ہو گی۔۔جس کا نام یہ لوگ اینا رکھیں گے۔۔وہ ایک بیماری کا شکار ہو گی اور اسی بیماری کے دوران لوئس کو اس کا شوہر چھوڑ جائے گا کہ تم مستبقل دیکھ سکتی تھیں تمہیں علم تھا ہماری بیٹی بیمار ہو کر مر جائے گے تم نے مجھے بتایا کیوں نہیں اور تم نے سب کچھ جانتے ہوئے بھی شادی کا انتخاب کیوں کیا۔۔۔اور شوہر کے جانے کے بعد اینا مر جائے گی۔۔
یہ سب کچھ جاننے کے بعد وہ واپس آرمی کیمپ آتی ہے اور اپنے ساتھی این کو بتاتی ہے ہتھیار سے مراد زبان ہے۔۔وہ ہمیں اپنی زبان سکھانے آئے ہیں۔۔۔

یہ اس فلم کا سب سے مشکل سین ہے اب


اسی وقت لوئس کو مستقبل کا ایک خیال آتا ہے کہ کیسے اقوام متحدہ کی ایک پارٹی میں چائنہ کا جنرل شینگ لوئس کا شکریہ ادا کرتا ہے کہ لوئس نے عین وقت پر چائنہ کے جرنل شینگ کو اس کے پرائیویٹ نمبر پر کال کی اور اسے ایلینز پر حملہ کرنے سے باز رکھا۔۔اور شینگ کو منانے کے لیے اس سے شینگ کی مرتی بیوی کے وہ فقرہ کہا جو مرتے وقت اس نے شینگ کے کان میں کہا تھا۔۔

مستقبل سے حال میں واپس آتے ہی لوئس اپنی آرمی کا سیٹلائٹ فون چراتی ہے اور جنرل شینگ کے پرائیویٹ نمبر پر کال کر کے وہی کرتی ہے جو اس نے مستبقل میں دیکھا ہوتا ہے یعنی اس کی مرتی بیوی کا فقرہ بتا کر اس کا دل نرم کرتی ہے اسے ایلینز پر حملہ کرنےسے باز رکھتی ہے وہ فقرہ یہ ہوتا ہے۔۔

There are no victory in war buy only widows.."
جنگ میں فتوحات نہیں ہوتیں بس بیوائیں ہوتی ہیں۔۔
چائنہ حملہ کرنے سے باز آتا ہے اور اعلان کرتا ہے کہ ہم ایلینز کے میسج آپ سے شیئر کریں گے اور باقی ممالک بھی یہی کرتے ہیں۔۔۔ایلینز کا مقصد پورا ہو جاتا ہے بارہ کے بارہ ممالک سے اسپیس کرافٹس واپس اڑ جاتے ہیں۔۔
آرمی کا کیمپ جس وقت ختم کیا جا رہا ہوتا ہے اس وقت این، لوئس بنک سے اپنی محبت کا اظہار کرتا ہے۔۔۔اس وقت لوئس کو علم بھی ہوتا ہے کہ ہم دونوں اگر شادی کر لیں تو ہماری ایک بیٹی ہو گی جس کا نام اینا رکھیں گے وہ بیمار ہو گی۔۔این مجھے چھوڑ دے اور بیٹی مر جائے گی لیکن پھر بھی وہ اپنی قسمت سمجھ کر یہ پرپوزل قبول کر لیتی ہے۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔
یہ تو تھی فلم کی کہانی۔۔اس فلم کی کہانی جتنی دل چسپ ہے اتنے ہی خوبصورت اس کے مناظر اور اتنی زبردست اس کی ہدایتکاری ہے۔۔۔فلم میں لوئس بنک کا کردار ایمی ایڈمز نے ادا کیا اور ایان ڈونلی کا کردار جیرمی رنر نے ادا کیا۔۔۔فلم دنیا بھر میں سپریم ہٹ رہی اور محض سینتالیس ملین ڈالرز کے بجٹ کے عوض دو سو تین ملین ڈالرز کی کمائی کی۔۔۔

اب آتےہیں چند سوالات و جوابات کی جانب

سوال
کیا ایلینز کی زبان سیکھنے کے بعد لوئس مستقبل دیکھنے کے قابل ہوتی ہے یا اسے پتا اس وقت چلتا ہے۔۔
جواب
اسی مووی میں لوئس بنک ایک جگہ کہتی ہے کہ کسی بھی نئی زبان کو سیکھنا آپ کے دماغ کو ری وائر کر سکتا ہے یعنی دماغ پر نئی نئی جہتیں کھل سکتی ہیں وہ الگ طرح سے سوچ سکتا ہے۔۔۔ایلینز کی زبان نشانات پر مشتمل ہوتی ہے۔۔۔اس زبان کو سیکھنے سے لوئس کا دماغ بھی ری وائر ہونا شروع ہو جاتا ہے وہ ایلینز کی ہی طرح ٹائم ٹریول کر سکتی ہے۔۔مستقبل میں جھانک سکتی ہے۔۔جہاں تک میں اس مووی کو سمجھا ہوں ایلیز کی زبان سمجھنے سے ہی وہ مستقبل میں جھانکنے لگی۔۔


۔ ۔۔۔
سوال
امریکہ بھر سے صرف لوئس بنک کا ہی انتخاب کیوں کیا جاتا ہے؟
جواب
کیوں کہ وہ غیر ملکی زبانوں کی ماہر ہوتی ہے۔۔۔اسی وجہ سے اسے بلایا جاتا ہے کہ ان سے بات کریں شاید آپ ان کی زبان کو سمجھ سکیں۔۔
۔۔۔۔۔
سوال
صرف لوئس بنک نے ایلین کی زبان سیکھی اس سے باقی سب کو کیا فائدہ؟
جواب
مووی دیکھا جا سکتا ہے کہ زبان سیکھنے کے بعد اس نے کتاب لکھنا شروع کر دی ہے یعنی وہ اس کتاب کی مدد سے دنیا بھر کو یہ زبان سکھانا چاہتی ہے تا کہ تین ہزار سال بعد جب ایلینز کو مدد کی ضرورت پڑے اس وقت سب کو زبان آتی ہو۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔
سوال
اگر ایلین مستقبل دیکھ سکتے ہیں تو ایبٹ بم کا شکار کیوں ہوا۔۔اسے تو علم ہونا چاہیے تھا کہ بم نصب ہے وہ پھٹنے والا ہے۔۔
جواب
انھیں بخوبی علم ہوتا ہے کہ بم پھٹنے والا ہے اسی لیے کوسٹیلو فورا وہاں سے ہٹ جاتا ہے ایبٹ جان بوجھ کر وہاں رہتا ہے تا کہ ایان اور لوئس کی جان بچا سکے۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سوال
بارہ شپس کیوں؟ وہ ایک ہی جگہ بھیج کر بھی تو زبان سکھا سکتے تھے؟
جواب
ایلینز چاہتے تھے کہ انسان ایک دوسرے تعاون کریں کیوں کہ مستقبل میں انھیں انسانوں کی مدد کی ضرورت پڑنے والی ہے نا کہ صرف ایک ملک کے انسانوں کی مدد کی ضرورت۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔