Thanks Thanks:  0
Likes Likes:  0
Page 1 of 2 12 LastLast
Results 1 to 15 of 18

Thread: naya afsana

  1. #1
    Senior Member

    Join Date
    Jan 2008
    Posts
    125
    Mentioned
    0 Post(s)
    Tagged
    0 Thread(s)

    naya afsana

    پھر سے تنہا ھین ھم۔۔۔


    ایک زوردار تماچہ لگانے کے بعد وہ چیہین دفہ ھو جاو اپنے کمرے مین زیفئ نے سر جکایا اور چپ چاپ اپنے کمرے مین چلا گیا باکی سب بھی نظریں چرائے اپنے انپنے کمروں مین چلے گئے آمنہ بیگم آنکھون مین آنسوں لئے لرکھراتے ھوئے اپنے پاس رکھی کرسی پر بیٹھ گئ اور با احطیار ان کے منہ سے یہ ھی شب نکلے یہ آپ نے اچھا نہی کیا فاروق بھائ۔۔۔۔ آپ نے میرے بیٹے کے ساتھ اچھا نہی کیا آنکھین بند کئے ٹیک لگائے وہ حود پر کابو پانے کی ناکام کوشش کر رہی تھین شاید اس مین سارئ گلتی میرئ ہئ ھے ۔۔ نا مین اتنا بڑا قدم اٹھاتی نا آج یہ سب ھوتا۔۔شاید ۔۔میری ھی گلتی تھی۔۔۔
    گھر روشنئوں سے چمک رہا تھاعاظم صاحب اور سفیہ بیگم بہت حوش تھے حوش بہی کیوں نا ہوتے آحر ان کے بیٹے اور بیٹئ کی شادی جو تھی فاروق کی آج بارات تھی اور آمنہ کی مہندی سفیہ بیگم آج تو تماری دلی تمنا پوری ہو گئ بہو جو گھر مین آ گئ ہاں عاظم پر مجھے حوشی کے ساتھ گم بہی ھے کے کل میری بیٹی مجہے چھور کر چلی جاے گی
    ۔۔۔ ارے بیٹیا تو ھوتی ھی پرائ ہین ایک نا ایک دن انیے اپنے گر جانا یئ پڑتا ھے۔
    پر عاظم مجہے آمنہ کی بہت فکر ھے کہین وہ کوئ عْلت قدم نہ اٹھا لے چپ انہوں نے سفیہ کے منہ پے انگلی رکیھی بس چپ سب ٹھیک ہو جایے گا۔۔پر عاظم ۔۔کہا نا چپ سفیہ کے چہرے پر مایوسی چھا گئ پر حاموشی کے سواکوئ چارہ نہئ تھا۔
    ۔۔آمنہ آمنہ حوش مین آو سارہ نے اسے جنجھوڑا تھا اپنا نہی تو کم از کم اپنے ماں باپ کی عزت کا ھی حیال کر لو کیا عزت رہ جاے گی تمارے ماں باپ کی جب انین پتا چلے گا کے ان کی بیٹی گھر سے بھاگ گئ پلیز آمنہ کچھ تو حیال کرو۔حیال کرو۔۔وہ چیہی انہین میرا حیال نھی آیا کتنی منتین کی مینے کے ابا علی کے ساتھ ہی میری زندگی کی حوشی ھے پر انھوں نے میری ایک نا سنی اور عثمان سے میری شادی طہ کر دی۔۔۔پر آمنہ وہ تمارے ماں باپ ھین وہ تمارا بھلا ھی سوچین گے سارہ پلیز مین فیسلا کر چکی ھوں
    ۔سارہ نے ایک لمبی آہ بھری ٹھیک ھے جو تمارے دل مین آئے وہ کرو۔۔پر ہلز ایک آحری بار پھر سوچ لو یہ نا ھو ساری عمر کا پچھتاواہ تمارا نصیب بن جائے۔۔سارہ یہ کہ کر کمرے سے نکل گئ
    سفیہ آمنہ کو لاو بھی رسم شروع کریں
    جی اچھا سفیہ بیگم ساڑی سمبالتے ھوئے آمنہ کے کمرے کی طرف بڑھیں۔آمنہ۔۔۔۔۔آمنہ کمرے مین چھائ حاموشی سے ان کا دل گبھرایا کمرہ کو حالی دیکھ ان کا دل ڈوبنے لگا یا اللہ حیر۔۔۔ اچانک ان کی نظر مہندی کے پیلے جھوڑے اور اس پے پڑے حط پر پڑی آنکھوں کے آگے اندھیراہ سا چھا گیا جیسے سب کچھ سمجھ آ گیا ھو کامپتے ہاتھوں سے حط اٹھایا
    پیارے اماں ابا ۔۔دنیاں کے ھر والدین یہی سوچتے ھین کے وہ جو بھی فیسلہ اپنی اولاد کے لئے کرتے ھین وہ ھمیشہ ٹھیک ھی ھوتا ھے وہ اپنی مرزی اپنی اولاد پر تھونپ دیتے ھین یہ سوچے سمجے بغیر کے زندگی انھوں نے نی بلکہ ان کے بچوں نے گزارنی ھوتی ھے اور کسی اور کی مرصْی سے زندگی گزارنے کا حوصلہ مجھ مین نھی میری اس شادی سے تین زندگیاں طبہ ہوں گی میری اپنی علی کی اور عثمان کی ھم مین سے کوئ بھی حوش نھی رہ پائے گا اس لئے مین یہ گھر چھور کر جا رھی ھوں علی کے ساتھ ۔
    آپ سب بھابھی کی آمد کی حوشی مین اتنے مگن ھین کے جب تک آپ کو یہ حط ملے گا مین بھت دور جا چکی ہوں گی جلد لوٹ آو گی پلز مجھے ماف کر دینا آپ کی آمنہ


    سفیہ بیگم پر تو جیسے بجلی گر پڑی ۔کیا کر دیا تم نے آمنہ جیتے جی ہی مار ڈالا۔۔۔کیا جواب دو گی مین سب کو۔۔۔کتنی دیر تک یہی سوچیین ان کے گرد گومتی رھین۔بڑی حمت کر کے وہ باہر آین پہلی نظر سٹیج پ بیٹھے فاروق پر گئ ۔۔کتنا حوش تھا وہ۔۔دوسری نظر عاظم پر گئ ۔۔پھر قدم دھیرے دھیرے ان کی طرف بھٹنے لگے
    الفاظ نے جیسے ساتھ چھوڑ دیا ھو۔۔سنے زرا بات کرنی تھی آپ سے ۔۔۔دبے ھوئے لہجے نے عاظم کو ششو پنج مین ڈال دیا ۔۔کیا بات ھے ۔۔زرا میرے ساتھ اندھر چلین وہ آمنہ آپ سے ملنے کی صد کر رہی ھے ۔۔۔مہمانوں کے سامنےاس سے اچھا بہانا کوئ سمج نہی آ رہا تھا۔
    کمرے مین حاموشی اور حط عاظم کے ہاتھ مین تھا ۔ٹانگوں مین جیسے جان نا تھی کھرا رہنے کی لرکھرا کے بڈ پر بیٹھے ۔۔۔عاظم آپ ٹھیک ھین نا؟۔۔۔۔سفیہ کے حوش ساتھ چھوڑ رھے تھے ۔۔عاظم۔۔ عاظم ۔۔ فاروق کو بلاوٓ۔ آپ ٹھک ھین نا۔۔مینے کھا فارق کو بلاوٓ سفیہ بایر کو باگیں باگتے باگتے ایک دماکا ھوا۔۔بجلی کی سی وہ پلٹین ۔۔۔ان کی چیحوں نے گھر بھر میں ہلچل مچا دی سب بھاگتے ھوٓے آن پحنچے فاروق کی نظر باپ کی حون مین لت پت لاش پر پڑی ماں کی چیحون کا اسے حوش نا ریا باپ کی طرف لپکا پر بھت دیر ھو چکی تھی ان کے ایک ہاتھ میں پستول اور دوسرے مین آمنہ کا لکھا حط اب بی موجود تھا فاروق نے ان کی مٹھی سے وہ کاعز کا ٹکرا نکالا ۔آمنہ کا لکھا ایک ایک شبد کانٹوں کی طرح چب رہا تھاغسا اور نفرت اس کے چھرے پر امڈھ آیٓ تھی۔
    continue کیسا حشیوں سے برا گھر ماتم کدا بن گیا تھا

  2. #2
    Senior Member

    Join Date
    Jan 2008
    Posts
    125
    Mentioned
    0 Post(s)
    Tagged
    0 Thread(s)

    Re: naya afsana

    اردو کمزور ھے گلطیان معاف پلیز

  3. #3
    Senior Member

    Join Date
    Aug 2008
    Posts
    25,159
    Mentioned
    1 Post(s)
    Tagged
    0 Thread(s)

    Re: naya afsana

    ایسی بات بالکل نہیں بھائی کہ کسی کو پسند نہیں آیا۔ اصل بات اتنی سی ھے کہ سب رومن پڑھنے سے بھاگتے ہیں۔ اگر آپ نے اردو میں لکھا ہوتا تو بے شمار لوگ پڑھکر رائے دے چکے ہوتے۔ کیا ایسا ہونا ممکن ھے کہ پہلے آپ اردو میں لکھنے کی پریکٹیس کریں اسکے بعد افسانہ لکھیں؟
    "There is no market for emotions.
    So,
    Never advertise feelings,
    Just display attitude"

  4. #4
    Senior Member

    Join Date
    Jan 2008
    Posts
    125
    Mentioned
    0 Post(s)
    Tagged
    0 Thread(s)

    Re: naya afsana

    thanks but yha urdu kaisy use kro mujy wo smj ni aa ri koi option nhi mil rhi

  5. #5
    Senior Member

    Join Date
    Jan 2008
    Posts
    125
    Mentioned
    0 Post(s)
    Tagged
    0 Thread(s)

    Re: naya afsana

    urdu type kerny ki option nhi mil rhi kea koi software kerna pdhy ga

  6. #6
    Senior Member

    Join Date
    Aug 2008
    Posts
    25,159
    Mentioned
    1 Post(s)
    Tagged
    0 Thread(s)

    Re: naya afsana

    یہ لیجیے

    http://www.oneurdu.com/forums/showthread.php?t=53640

    یہاں سے اردو کی بورڈ انسٹال کریں۔ ایک ویک تک پریکٹس کریں تو اسکے بعد آسانی سے اردو میں لکھنے پر ہاتھ رواں ہو جائے گا اور ایک مہینے بعد ہم سب کی طرح تیز تیز لکھ سکیں گے۔ تب آپ سارے تھریڈز میں گفتگو میں اور افسانے لکھنے میں بہت سہولت محسوس کریں گے۔
    "There is no market for emotions.
    So,
    Never advertise feelings,
    Just display attitude"

  7. #7
    Senior Member Ahmed Lone's Avatar

    Join Date
    Oct 2007
    Location
    سعودی عرب
    Posts
    10,591
    Blog Entries
    21
    Mentioned
    12 Post(s)
    Tagged
    0 Thread(s)

    Re: naya afsana

    بہت اچھے


    ایک ماہ کا لارا لگا دیا

    ;d


    بھائی اگر سمجھ سکو تو یہاں اردو ٹائپنگ ہو جاتی ہے

    اس میں ٹائپ کرکے ماوس سے سلیکٹ کرکے کاپی کرکے یہاں پیسٹ کر دو

    http://www.urdukeyboard.com/
    اب کوئی دعوی نہ کرنا عمر بھر
    اشک آنکھوں میں نہ بھرنا عمر بھر
    ہم تمہیں چاہتے ہیں، دیکھو پھر کبھی
    ہم سے تو تم نہ ہی کہنا عمر بھر۔ ۔ ۔

  8. #8
    Senior Member

    Join Date
    Jan 2008
    Posts
    125
    Mentioned
    0 Post(s)
    Tagged
    0 Thread(s)

    Re: naya afsana

    thnk u so much :-)

  9. #9
    Section Managers

    Join Date
    Dec 2008
    Posts
    14,913
    Mentioned
    1 Post(s)
    Tagged
    0 Thread(s)

    Re: naya afsana

    السلام علیکم عثمان بھائی۔

    آپ کا رومن اردو میں لکھا افسانہ بلکہ یوں کہنا چاہیے کہ افسانے کا پیراگراف میں نے پڑھا ہے۔ چونکہ ایک ہی پیراگراف آپ نے لکھا ہے اس لیے سمجھ نہیں سکی کہ یہ آپ کے افسانے کی شروعات ہے یا آپ نے خلاصے کے طور پر ایک پیراگراف بنا کر لکھا ہے۔

    بہرحال جو بھی ہے آغاز اچھا ہے۔ بہت خوشی ہو گی اگر آپ اسے اردو میں ٹائپ کر کے مکمل کریں۔ اپنی تحریر میں آپ نے بہت مختصر الفاظ میں کرداروں کا تعارف بھی دے دیا اور تجسس کا عنصر بھی چھوڑ دیا۔

    پھر وہی بات کہ اگر بطور خلاصہ یہ پیراگراف لکھا ہے تو ٹھیک بصورت دیگر کرداروں کا تھوڑا تفصیلی تعارف دیں۔ اردو لکھنے کے لیے ساحرہ سس اور احمد بھائی آپ کو گائیڈ کر ہی چکے ہیں۔ امید ہے آپ جلد ہی اردو میں کمال حاصل کر لیں گے۔ آپ کے افسانے کے مکمل ہونے کا انتظار رہے گا۔

    وش یو گڈ لک۔
    Hazrat ALI A.S. Said

    Sermon 126:

    With regard to me, two categories of people will be ruined, namely he who loves me too much and the love takes him away from rightfulness, and he who hates me too much and the hatred takes him away from rightfulness.

    Nahjul Balagha.

  10. #10
    Senior Member

    Join Date
    Jan 2008
    Posts
    125
    Mentioned
    0 Post(s)
    Tagged
    0 Thread(s)

    Re: naya afsana

    سکریا سب کا

  11. #11
    Senior Member

    Join Date
    Aug 2008
    Posts
    25,159
    Mentioned
    1 Post(s)
    Tagged
    0 Thread(s)

    Re: naya afsana

    Quote Originally Posted by u_s_man View Post
    سکریا سب کا
    '
    واؤؤؤؤؤؤؤؤؤؤؤ گریٹ ایفرٹ
    اس خوشی میں کچھ پوائنٹس آپکی نظر۔ اس کی بورڈ سے آپ وقتی طور پر لکھ سکتے ہیں مگر جب انسٹال کر لیں گے تو بہت تیزی سے بغیر کسی الجھن کے خود سے بس لکھتے جائیں گے۔
    "There is no market for emotions.
    So,
    Never advertise feelings,
    Just display attitude"

  12. #12
    Senior Member Ahmed Lone's Avatar

    Join Date
    Oct 2007
    Location
    سعودی عرب
    Posts
    10,591
    Blog Entries
    21
    Mentioned
    12 Post(s)
    Tagged
    0 Thread(s)

    Re: naya afsana

    Quote Originally Posted by u_s_man View Post
    سکریا سب کا

    واہ یہ ہوئی نا بات


    کہاں اماں جی نے ایک ماہ دے دیا تھا

    ایک منٹ نہیں لگا میرے بھائی کے ہم نام نے شکریہ اردو میں کرکے دل خوش کر دیا

    اب کوئی دعوی نہ کرنا عمر بھر
    اشک آنکھوں میں نہ بھرنا عمر بھر
    ہم تمہیں چاہتے ہیں، دیکھو پھر کبھی
    ہم سے تو تم نہ ہی کہنا عمر بھر۔ ۔ ۔

  13. #13
    Senior Member

    Join Date
    Jan 2008
    Posts
    125
    Mentioned
    0 Post(s)
    Tagged
    0 Thread(s)

    Re: naya afsana

    plz do cments about my story

  14. #14
    Senior Member

    Join Date
    Apr 2009
    Location
    کراچی
    Posts
    25,116
    Blog Entries
    3
    Mentioned
    5 Post(s)
    Tagged
    0 Thread(s)

    Re: naya afsana

    Quote Originally Posted by u_s_man View Post
    plz do cments about my story
    کہانی کا مین تھیم بہت اچھا لگا اور الفاظ کے چناؤ بھی اچھے لگے مگر کہانی کے اختتام پر دو باتیں سمجھ نہیں آئی۔۔۔مطلب conclusion سمجھ نہیں آیا کہ۔۔
    آپ نے اس کہانی کے ذیعے کیا پیغام دیا
    کہ کیا ماں باپ نے اپنی بیٹی کی شادی اس کی پسند کی نہیں کی تبھی انکو یہ صلہ ملا۔۔۔
    یا لڑکی نے غلطی کی اور اگر غلطی کی تو اسکا انجام کیا ہوا؟

  15. #15
    Section Managers

    Join Date
    Dec 2008
    Posts
    14,913
    Mentioned
    1 Post(s)
    Tagged
    0 Thread(s)

    Re: naya afsana

    عثمان بھائی، آپ میں لکھنے کی اچھی صلاحیت ہے۔ انداز اچھا لگا آپ کا مگر پھر بھی میرے نزدیک تو یہ افسانے کے معیار کے مطابق نہیں ہے۔ میرا مشورہ ہے کہ آپ افسانہ نگاری سے متعلق مزید معلومات اکٹھی کریں۔

    مانو نے اوپر کی پوسٹ میں جو سوال کیا وہ میرے بھی ذہن میں آیا تھا۔ یا تو افسانے کا آخر ایسا ہو کہ قاری خودبخود سمجھ جائے یا پھر جو میسج آپ اپنی تحریر کے ذریعے دینا چاہتے ہیں وہ واضح طور پر بیان کریں۔

    یوں تو کہانی بالکل ادھوری سی لگ رہی ہے۔ یا یوں کہنا چاہیے کہ یہ تو کہانی کا پہلا فیز تھا پھر اس سے آگے کیا ہوا؟ لڑکی کا انجام کیا ہوا؟ دیکھا جائے تو معاشرتی مسائل کے حوالے سے یہ موضوع بہت شاندار ہے۔ اس پر مزید محنت کریں۔

    ایک مشورہ اور برا نہ محسوس کریں تو۔ آپ کوشش کریں کہ پہلے یہاں فورم پر زیادہ سے زیادہ پوسٹس کریں تاکہ آپ کی اردو کی املا درست ہو جائے اور ٹائپنگ مسٹیکس بھی دور ہو جائیں۔ اس طرح آپ بہت سے اچھے اور نئے دوست بھی بنا سکیں گے جو آپ کے لکھے، کہے کو پڑھیں گے اہمیت دیں گے۔

    آپ کی اردو میں لکھنے کی یہ پہلی کوشش ہے اور افسانہ نگاری کی بھی اس کے لیے کچھ پوائنٹس۔
    Hazrat ALI A.S. Said

    Sermon 126:

    With regard to me, two categories of people will be ruined, namely he who loves me too much and the love takes him away from rightfulness, and he who hates me too much and the hatred takes him away from rightfulness.

    Nahjul Balagha.

Page 1 of 2 12 LastLast

Bookmarks

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •