Thanks Thanks:  0
Likes Likes:  0
Results 1 to 3 of 3

Thread: میرا ایک مسئلہ ۔پلیز help

  1. #1
    Senior Member

    Join Date
    Aug 2008
    Posts
    202
    Mentioned
    0 Post(s)
    Tagged
    0 Thread(s)

    میرا ایک مسئلہ ۔پلیز help

    اسلام علیکم میری ایک آنٹی ھیں ان کی بیٹی کے بارے میں بات کرنی ھے ان کی بیٹی 12 سال کی ھے لیکن چپ چپ رہیتی ھے کسی سے کوئی بات نہیں کرتی پڑھتی بھی نہیں ھے مگر سمجھتی سب کچھ ھے کسی کے سامنے کوئی بات نہیں کرتی مگر جب بچوں کے ساتھ ھوتی ھے تو با لکل صحیح باتیں کرتی ھے لگتا ھی نہیں کے یہ وہی لڑکی ھے جو دوسروں کے سامنے کچھ بولتی ھی نہیں اس کےperiods بھی سٹارٹ ھو گئے ھیں بس ھر وقت ڈرائنگ ھی کرتی رہتی ھے۔ پلیز مجھے یس کے بارے میں کچھ بتائیں میری آنٹی بیت پریشان ھیں میں نے آپ کا فورم دیکھا تو سوچا آپ سے پوچھتی ھوں۔
    کچھ دیر ھمارے ساتھ چلو،
    ھم دل کی کہانی کہہ دیں گے
    سمجھے نہ جسیے تم آنکھوں سے
    وہ بات زبانی کہہ دیں گے
    پھولوں کی طرح جب ھونٹوں پہ
    ایک شوخ تبسم بکھرے گا
    دھیرے سے تمھارے کانوں میں
    اک بات پرانی کہہ دیں گے
    اقرار وفا تم کیا جانو،اظہاروفا تم کیا جانو
    ھم ذکر کریں گے جھرنوں کا
    اور اپنی کہانی کہہ دیں گے۔

  2. #2
    Senior Member

    Join Date
    Mar 2008
    Posts
    12,993
    Mentioned
    4 Post(s)
    Tagged
    0 Thread(s)

    Re: میرا ایک مسئلہ ۔پلیز help

    اس شکائیت کی وجوہات یہ ہو سکتی ہیں
    1- گلے یا کانوں میں خرابی جس کی وجہ سے بولنا یا اپنی ہی آواز کو سننا خوشگوار نہ ہو۔
    2- کسی وجہ سے احساس کمتری، ہو سکتا ہے بچپن میں بولنے پر ڈانٹا یا مارا گیا ہو۔
    3- پینٹرز سنڈروم: اس کیفیت میں احساس برتری اور تنہائی پسندی غالب آجاتی ہے۔ بچہ اپنے آپ کو بلا وجہ مصروف رکھتا ہے- ایسے لوگوں کی چھٹی حس بہت تیز ہو جاتی ہے۔

    یہ کوئی بیماری نہیں ہے۔

    ایسے بچوں کو زبردستی بولنے پر آمادہ نہ کریں۔
    ان کے آس پاس ایسا ماحول بنائیں جو ان کو خوش کرے اور گفتگو ایسے موضوعات پر کریں جن پر انہیں دسترس اور دلچسپی ہو۔
    ان کے پسندیدہ کام میں شامل ہو جائیں اور خودکلامی کریں، وہ خود ہی گفتگو میں شامل ہونا شروع ہو جائیں گے۔
    -
    اگر ضروری ہو تو ڈاکٹر کے مشورہ سے مناسب ملٹی وٹامن اور بیٹا بلاکر دیں۔


    مزے مزے کے مضامین: ٭ پاء جی ٭ ٹونٹی فور ٭ واپسی ٭ مرزا جی کی منگنی ٭ واہ، گُڈ ٭

    Motivation is Magic_________________________میرا بلاگ
    مثبت سوچئیے، مثبت بات کیجئیے، مثبت نتائج کی امید رکھئیے۔

  3. #3
    Senior Member

    Join Date
    Jan 2009
    Posts
    1,577
    Mentioned
    0 Post(s)
    Tagged
    0 Thread(s)

    Re: میرا ایک مسئلہ ۔پلیز help

    Quote Originally Posted by barish199 View Post
    اسلام علیکم میری ایک آنٹی ھیں ان کی بیٹی کے بارے میں بات کرنی ھے ان کی بیٹی 12 سال کی ھے لیکن چپ چپ رہیتی ھے کسی سے کوئی بات نہیں کرتی پڑھتی بھی نہیں ھے مگر سمجھتی سب کچھ ھے کسی کے سامنے کوئی بات نہیں کرتی مگر جب بچوں کے ساتھ ھوتی ھے تو با لکل صحیح باتیں کرتی ھے لگتا ھی نہیں کے یہ وہی لڑکی ھے جو دوسروں کے سامنے کچھ بولتی ھی نہیں اس کےperiods بھی سٹارٹ ھو گئے ھیں بس ھر وقت ڈرائنگ ھی کرتی رہتی ھے۔ پلیز مجھے یس کے بارے میں کچھ بتائیں میری آنٹی بیت پریشان ھیں میں نے آپ کا فورم دیکھا تو سوچا آپ سے پوچھتی ھوں۔
    وعلیکم السلام!
    ہر بچے کا اپنا ایک مزاج ہوتا ہے کوئی کم گو تو کوئی باتونی، کوئی شرارتی تو کوئی سنجیدہ، آپ نے یہ ذکر نہیں کیا کہ وہ شروع سے ہی ایسی ہے یا اب ایسی ہو گئ ہے، آپ نے بتایا کہ بچوں کہ ساتھ وہ بالکل ٹھیک ہوتی ہے اس کا مطلب تو یہی ہے کہ اسے کوئی ایسا طبعی مسئلہ نہیں ہے جس کی وجہ سے وہ بات نہ کرسکتی ہو۔ کچھ بچے ویسے بھی اپنے ساتھیوں اور ہم عمروں کے ساتھ زیادہ اچھا محسوس کرتے ہیں کیونکہ انھیں ان سے زیادہ انسیت و اپنائیت کا احساس ہوتا ہے۔ اس وقت وہ جسمانی تبدیلیوں کے دور سے گزر رہی ہے جس میں نفسیاتی و جذباتی ضروریات میں بھی تبدیلی آتی ہے۔ وہ ہر وقت جو ڈرائنگ کرتی ہے اس میں کیا بناتی ہے اس پر بھی غور کرنے کی ضرورت ہے کیونکہ تخلیق کسی بھی قسم کی ہو کسی حد تک شخصیت کی عکاس ہوتی ہے، گھر کا ماحول اس ضمن میں بہت اہم ہے کہ ان سے شروع سے کس طرح کا رویہ رکھا گیا، کن باتوں پر حوصلہ افزائی کی جاتی ہے اور کن پر روک ٹوک، اس کی کن باتوں پر مثبت ردعمل کا اظہار کیا جاتا ہے، اگر بچہ اس دور میں عدم اعتماد یا کسی قسم کے احساس کمتری کا شکار ہو رہا ہے تو اس میں بڑا کردار اس کے گھر والوں کا ہی ہوتا ہے، اگر پڑھتی نہیں ہے تو بھی یہ دیکھنے کی ضرورت ہے کہ پڑھنا پسند نہیں، یاد کرنے میں مشکل ہے یا پڑھانے والوں سے کوئی مسئلہ ہے، کیا چیز ہے جو انھیں ایسا کرنے سے روکتی ہے۔ اگر وہ کسی بات میں کسی بھی قسم کے ردعمل(منفی/مثبت) کا اظہار نہیں کرتی اور لاتعلقی کا رویہ اختیار کرتی ہے تو پھر اسے یقینی طور پر نفسیاتی علاج کی ضرورت ہے۔
    جائزہ لیں کہ یہ رویہ کب سے ہے اور اس کے ممکنہ اسباب کیا کیا ہیں، بعض بچیاں بہت حساس اور زودرنج ہوتی ہیں اور خصوصی توجہ سے ہی ان کو سنبھالا جاسکتا ہے۔ ان کو خیالات کے اظہار کا موقع دیں، ان کے ساتھ بچہ بن کر ان کا ساتھ نبھائیں اور جذباتی طور سے ان کے قریب ہونے کی کوشش کریں، ان کی کسی ناپسندیدہ بات پر انھیں ٹوکنے سے زیادہ ان کی پسندیدہ عادات کو سراہنے کی کوشش کریں، ان کی پسند ناپسند کو سمجھیں اور اسے اہمیت دیں۔

Bookmarks

Posting Permissions

  • You may not post new threads
  • You may not post replies
  • You may not post attachments
  • You may not edit your posts
  •