View RSS Feed

جستجوِ دل

آپ کی ہے یا باپ کی ہے

Rate this Entry


ﺍﯾﮏ ﭘﺮﺍﻧﯽ ﮐﮩﺎﻭﺕ ﮨﮯ
" ﺁﭖ ﮐﯽ ﮨﮯ ﯾﺎ ﺑﺎﭖ ﮐﯽ ﮨﮯ "
ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﯾﮏ ﺩﻓﻌﮧ ﮐﮩﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺧﻮﺷﺤﺎﻝ ﺷﺨﺺ ﺭﮨﺘﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﺳﮑﺎ
ﺍﯾﮏ ﺍﮐﻠﻮﺗﺎ ﺑﯿﭩﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻣﺎﮞ ﮐﮯ ﺍﮐﻠﻮﺗﮯ ﺑﯿﭩﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﻓﻄﺮﯼ ﺧﻮﻑ ﮐﮯ
ﺗﺤﺖ ﻣﮕﺮ ﻧﺎﺯ ﻭ ﻧﻌﻢ ﻣﯿﮟ ﭘﻼ ﮨﻮﺍ، ﯾﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﮐﮧ ﺟﻮﺍﻥ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ۔ ﻧﮧ
ﮐﻮﺋﯽ ﮨﻨﺮ ، ﻧﮧ ﮨﯽ ﮐﺴﯽ ﮐﺎﻡ ﮐﺎ ﺗﺠﺮﺑﮧ۔ ﺍﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﮨﯽ ﮐﺎﻡ ﺁﺗﺎ ﺗﮭﺎ
ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﺗﮭﺎ ﺑﺎﭖ ﺳﮯ ﭼﮭﭙﺎ ﮐﺮ ﻣﺎﮞ ﮐﮯ ﺩﯾﺌﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﭘﯿﺴﻮﮞ ﺳﮯ
ﮐﮭﯿﻞ ﮐﻮﺩ ﺍﻭﺭ ﻣﺴﺘﯿﺎﮞ ﮐﺮﻧﺎ ﺍﻭﺭ ﺳﮍﮐﻮﮞ ﭼﻮﺭﺍﮨﻮﮞ ﭘﺮ ﻭﻗﺖ ﮔﺰﺍﺭﻧﺎ۔
ﺍﻭﺭ ﺍﯾﮏ ﺩﻥ ﺻﺒﺢ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﺑﺎﭖ ﻧﮯ ﺍﺳﮯ ﺁﻭﺍﺯ ﺩﯾﮑﺮ ﺍﭘﻨﮯ ﭘﺎﺱ
ﺑﻼﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﺎ : ﺑﯿﭩﮯ ﺍﺏ ﺗﻢ ﺑﮍﮮ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ ﮨﻮ ﺍﻭﺭ ﺧﯿﺮ ﺳﮯ ﺟﻮﺍﻥ
ﺑﮭﯽ ﮨﻮ۔ ﺁﺝ ﺳﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺫﺍﺕ ﭘﺮ ﺑﮭﺮﻭﺳﮧ ﮐﺮﻧﺎ ﺳﯿﮑﮭﻮ، ﺍﭘﻨﮯ ﭘﺴﯿﻨﮯ
ﮐﻮ ﺑﮩﺎ ﮐﺮ ﮐﻤﺎﺋﯽ ﮐﺮﻭ ﺍﻭﺭ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮔﺰﺍﺭﻧﮯ ﮐﺎ ﮈﮬﻨﮓ ﺳﯿﮑﮭﻮ۔
ﺑﯿﭩﮯ ﮐﻮ ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﮐﭽﮫ ﻧﺎﮔﻮﺍﺭ ﺳﯽ ﮔﺰﺭﯼ، ﺗﻘﺮﯾﺒﺎً ﺍﺣﺘﺠﺎﺝ ﺑﮭﺮﮮ
ﺍﻧﺪﺍﺯ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺑﺎﭖ ﺳﮯ ﮐﮩﺎ : ﻣﺠﮭﮯ ﺗﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﻧﺎ ﻧﮩﯿﮟ
ﺁﺗﺎ۔
ﺑﺎﭖ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ : ﮐﻮﺋﯽ ﺑﺎﺕ ﻧﮩﯿﮟ، ﺍﺏ ﺳﯿﮑﮫ ﻟﻮ، ﺗﻢ ﺁﺝ ﮨﯽ ﺷﮩﺮ ﺭﻭﺍﻧﮧ
ﮨﻮ ﺟﺎﺅ، ﺍﻭﺭ ﯾﺎﺩ ﺭﮐﮭﻮ ﺟﺐ ﺗﮏ ﻣﯿﺮﮮ ﻟﺌﮯ ﺍﯾﮏ ﺳﻮﻧﮯ ﮐﯽ ﺍﺷﺮﻓﯽ
ﻧﮧ ﮐﻤﺎ ﻟﯿﻨﺎ ﻟﻮﭦ ﮐﺮ ﻭﺍﭘﺲ ﻧﮧ ﺁﻧﺎ۔
ﻣﺮﺗﺎ ﮐﯿﺎ ﻧﮧ ﮐﺮﺗﺎ ﮐﮯ ﻣﺼﺪﺍﻕ، ﺑﯿﭩﺎ ﮔﮭﺮ ﺳﮯ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺩﺭﻭﺍﺯﮮ
ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺑﮍﮪ ﮨﯽ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻣﺎﮞ ﺟﻮ ﯾﮧ ﺳﺐ ﮔﻔﺘﮕﻮ
ﭼﮭﭗ ﮐﺮ ﺳﻦ ﭼﮑﯽ ﺗﮭﯽ ﺑﯿﭩﮯ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺁ ﮔﺌﯽ، ﻣﭩﮭﯽ ﻣﯿﮟ
ﭼﮭﭙﺎﺋﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﺍﺷﺮﻓﯽ ﺑﯿﭩﮯ ﮐﻮ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺑﻮﻟﯽ ﮐﮧ ﺷﮩﺮ ﭼﻠﮯ
ﺟﺎﺅ، ﺭﺍﺕ ﮔﺌﮯ ﻟﻮﭦ ﮐﺮ ﯾﮧ ﺍﺷﺮﻓﯽ ﺑﺎﭖ ﮐﻮ ﻻ ﮐﺮ ﺩﯾﻨﺎ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﻨﺎ ﮐﮧ
ﻣﯿﮟ ﺷﮩﺮ ﺳﮯ ﮐﻤﺎ ﮐﺮ ﻻﯾﺎ ﮨﻮﮞ۔ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﺧﻮﺷﯽ ﺧﻮﺷﯽ
ﮔﮭﺮ ﺳﮯ ﺭﻭﺍﻧﮧ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ۔
ﺷﺎﻡ ﮔﺌﮯ ﻟﻮﭦ ﮐﺮ ﺑﯿﭩﮯ ﻧﮯ ﻭﯾﺴﮯ ﮨﯽ ﮐﯿﺎ ﺟﺲ ﻃﺮﺡ ﺍﺳﮑﯽ ﻣﺎﮞ
ﻧﮯ ﺍﺳﮯ ﺳﻤﺠﮭﺎﯾﺎ ﺗﮭﺎ، ﺳﯿﺪﮬﺎ ﺑﺎﭖ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺟﺎﮐﺮ ﺑﻮﻻ: ﺍﺑﺎ ﺟﺎﻥ،
ﯾﮧ ﻟﯿﺠﯿﺌﮯ ﺳﻮﻧﮯ ﮐﯽ ﺍﺷﺮﻓﯽ، ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺳﺎﺭﺍ ﺩﻥ ﺑﮩﺖ ﺟﺎﻥ ﻟﮍﺍ ﮐﺮ
ﮐﺎﻡ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﮩﺖ ﮨﯽ ﻣﺸﮑﻞ ﺳﮯ ﯾﮧ ﺍﺷﺮﻓﯽ ﮐﻤﺎ ﮐﺮ ﺁﭖ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ
ﻻﯾﺎ ﮨﻮﮞ۔
ﺑﺎﭖ ﻧﮯ ﺍﺷﺮﻓﯽ ﮐﻮ ﻟﯿﮑﺮﮐﺎﻓﯽ ﻏﻮﺭ ﺳﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ، ﭘﮭﺮ ﺁﺗﺸﺪﺍﻥ ﻣﯿﮟ
ﺟﻠﺘﯽ ﺁﮒ ﻣﯿﮟ ﺟﮭﻮﻧﮑﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺑﯿﭩﮯ ﺳﮯ ﮐﮩﺎ : ﻧﮩﯿﮟ ﺑﺮﺧﻮﺭﺩﺍﺭ، ﯾﮧ
ﻭﮦ ﺍﺷﺮﻓﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﺟﻮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻣﺎﻧﮕﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﺗﻢ ﮐﻞ ﺳﮯ ﺩﻭﺑﺎﺭﮦ
ﮐﺎﻡ ﭘﺮ ﺟﺎﺅ ﺍﻭﺭ ﺩﯾﮑﮫ ﻟﯿﻨﺎ ﺟﺐ ﺗﮏ ﺍﯾﮏ ﺍﺷﺮﻓﯽ ﮐﻤﺎ ﻧﮧ ﻟﯿﻨﺎ ﻟﻮﭦ ﮐﺮ
ﻭﺍﭘﺲ ﻧﮧ ﺁﻧﺎ۔
ﺑﯿﭩﺎ ﺧﺎﻣﻮﺷﯽ ﺳﮯ ﺑﺎﭖ ﮐﯽ ﺍﺱ ﺣﺮﮐﺖ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﺘﺎ ﺭﮨﺎ، ﻧﮧ ﮐﻮﺋﯽ
ﺍﺣﺘﺠﺎﺝ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﺭﺩِ ﻋﻤﻞ۔
ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺩﻥ ﺷﮩﺮ ﮐﻮ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﮔﮭﺮ ﺳﮯ ﺑﺎﮨﺮ ﻧﮑﻠﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ
ﺩﺭﻭﺍﺯﮮ ﮐﯽ ﺍﻭﭦ ﻣﯿﮟ ﻣﺎﮞ ﮐﻮ ﭘﮭﺮ ﻣﻨﺘﻈﺮ ﭘﺎﯾﺎ، ﻣﺎﮞ ﻧﮯ ﺍﺳﮑﯽ
ﻣﭩﮭﯽ ﭘﺮ ﺍﯾﮏ ﺍﻭﺭ ﺍﺷﺮﻓﯽ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮐﮩﺎ: ﺑﯿﭩﮯ ﺍﺱ ﺑﺎﺭ ﺟﻠﺪﯼ
ﻭﺍﭘﺲ ﻧﮧ ﺁﻧﺎ، ﺷﮩﺮ ﻣﯿﮟ ﺩﻭ ﯾﺎ ﺗﯿﻦ ﺩﻥ ﺭﮐﮯ ﺭﮨﻨﺎ، ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﻟﻮﭦ ﮐﺮ
ﺑﺎﭖ ﮐﻮ ﯾﮧ ﺍﺷﺮﻓﯽ ﻻ ﺩﯾﻨﺎ۔
ﺑﯿﭩﮯ ﻧﮯ ﺷﮩﺮ ﺟﺎ ﮐﺮ ﻣﺎﮞ ﮐﮯ ﮐﮩﮯ ﭘﺮ ﻋﻤﻞ ﮐﯿﺎ ، ﺗﯿﻦ ﺩﻥ ﮐﮯ
ﺑﻌﺪ ﮔﮭﺮ ﻟﻮﭦ ﮐﺮ ﺳﯿﺪﮬﺎ ﺑﺎﭖ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺷﺮﻓﯽ ﺍﺳﮯ ﺗﮭﻤﺎ
ﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮐﮩﺎ : ﺍﮮ ﻭﺍﻟﺪ ﻣﺤﺘﺮﻡ، ﯾﮧ ﻟﯿﺠﯿﺌﮯ ﺳﻮﻧﮯ ﮐﯽ ﺍﺷﺮﻓﯽ،
ﺍﺳﮯ ﮐﻤﺎﻧﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﮩﺖ ﮐﭩﮭﻦ ﻣﺤﻨﺖ ﮐﺮﻧﺎ ﭘﮍﯼ ﮨﮯ۔
ﺑﺎﭖ ﻧﮯ ﺍﺷﺮﻓﯽ ﻟﯿﮑﺮ ﺍﺳﮯ ﮐﺎﻓﯽ ﺩﯾﺮ ﻏﻮﺭ ﺳﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﺑﺎﺭﮦ
ﯾﮧ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺁﮒ ﻣﯿﮟ ﭘﮭﯿﻨﮏ ﺩﯼ ﮐﮧ : ﺑﯿﭩﮯ ﯾﮧ ﻭﮦ ﺍﺷﺮﻓﯽ ﻧﮩﯿﮟ
ﮨﮯ ﺟﻮ ﻣﯿﮟ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﮨﻮﮞ، ﮐﻞ ﺗﻢ ﭘﮭﺮ ﺳﮯ ﮐﺎﻡ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺟﺎﺅ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ
ﻭﻗﺖ ﺗﮏ ﻧﮧ ﻟﻮﭨﻨﺎ ﺟﺐ ﺗﮏ ﺍﺷﺮﻓﯽ ﻧﮧ ﮐﻤﺎ ﻟﯿﻨﺎ۔
ﺍﺱ ﺑﺎﺭ ﺑﮭﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﺎﭖ ﮐﯽ ﺍﺱ ﺣﺮﮐﺖ ﭘﺮ ﺑﯿﭩﺎ ﺑﻐﯿﺮ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﮏ ﻟﻔﻆ
ﺑﻮﻟﮯ ﺧﺎﻣﻮﺵ ﺭﮨﺎ۔
ﺗﯿﺴﺮﯼ ﻣﺮﺗﺒﮧ ﺍﺱ ﺑﺎﺭ ﯾﮧ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺎﮞ ﮐﮯ ﺟﺎﮔﻨﮯ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ
ﮨﯽ ﺷﮩﺮ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺭﻭﺍﻧﮧ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﻭﮨﺎﮞ ﺍﯾﮏ ﻣﮩﯿﻨﮧ ﺭﮨﺎ۔ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ
ﺑﺎﺭ ﺍﯾﮏ ﻣﮩﯿﻨﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪﺣﻘﯿﻘﯽ ﻣﻌﻨﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﺤﻨﺖ ﻭ ﻣﺸﻘﺖ ﺳﮯ
ﮐﻤﺎﮐﺮ ﺍﺷﺮﻓﯽ ﮐﻮ ﻧﮩﺎﯾﺖ ﺣﻔﺎﻇﺖ ﺳﮯ ﻣﭩﮭﯽ ﻣﯿﮟ ﺩﺑﺎﺋﮯ ،
ﻣﺴﮑﺮﺍﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﺎﭖ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺣﺎﺿﺮ ﮨﻮﺍ، ﺍﺷﺮﻓﯽ ﺑﺎﭖ ﮐﯽ
ﻃﺮﻑ ﺑﮍﮬﺎﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺑﻮﻻ : ﺍﮮ ﻭﺍﻟﺪِ ﻣﺤﺘﺮﻡ، ﻣﯿﮟ ﻗﺴﻢ ﮐﮭﺎ ﮐﺮ ﮐﮩﺘﺎ
ﮨﻮﮞ ﮐﮧ ﺍﺱ ﺑﺎﺭ ﯾﮧ ﺍﺷﺮﻓﯽ ﻣﯿﺮﮮ ﭘﺴﯿﻨﮯ ﮐﯽ ﮐﻤﺎﺋﯽ ﮨﮯ، ﯾﻘﯿﻦ
ﮐﯿﺠﺌﮯ ﺍﺳﮯ ﮐﻤﺎﻧﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﮩﺖ ﻣﺤﻨﺖ ﮐﺮﻧﺎ ﭘﮍﯼ ﮨﮯ۔
ﺳﻮﻧﮯ ﮐﯽ ﺍﺷﺮﻓﯽ ﮐﻮ ﮨﺎﺗﮫ ﻣﯿﮟ ﻟﯿﮑﺮ ﺑﺎﭖ ﮐﺎﻓﯽ ﻏﻮﺭ ﺳﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﺎ
ﺭﮨﺎ، ﺍﺱ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﮐﮧ ﺍﺳﮑﺎ ﺑﺎﭖ ﺍﺷﺮﻓﯽ ﮐﻮ ﺁﮒ ﻣﯿﮟ ﮈﺍﻟﻨﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ
ﮨﺎﺗﮫ ﺑﮍﮬﺎﺗﺎ، ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﻧﮯ ﺁﮔﮯ ﺑﮍﮪ ﮐﺮ ﺑﺎﭖ ﮐﺎ ﮨﺎﺗﮫ ﺗﮭﺎﻡ ﻟﯿﺎ۔ﺍﺱ ﺑﺎﺭ
ﺑﺎﭖ ﮨﻨﺲ ﺩﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﮍﮪ ﮐﺮ ﺑﯿﭩﮯ ﮐﻮ ﮔﻠﮯ ﻟﮕﺎﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮐﮩﺎ : ﺍﺏ ﺑﻨﮯ
ﮨﻮ ﺟﻮﺍﻥ ﺗﻢ !ﺑﮯ ﺷﮏ ﯾﮧ ﺍﺷﺮﻓﯽ ﺗﯿﺮﯼ ﻣﺤﻨﺖ ﺍﻭﺭ ﭘﺴﯿﻨﮯ ﮐﯽ
ﮐﻤﺎﺋﯽ ﮨﮯ۔ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺍﺳﮯ ﺿﺎﺋﻊ ﮨﻮﻧﺎ ﺗﺠﮫ ﺳﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮔﯿﺎ۔
ﺟﺒﮑﮧ ﺍﺱ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﺩﻭ ﺑﺎﺭ ﺍﺷﺮﻓﯿﺎﮞ ﺁﮒ ﻣﯿﮟ ﭘﮭﯿﻨﮏ ﭼﮑﺎ ﮨﻮﮞ
ﻣﮕﺮ ﺗﺠﮭﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﻓﺴﻮﺱ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ ﻣﮕﺮ ﺍﺱ ﺩﻓﻌﮧ ﺗﻤﯿﮟ ﺍﭘﻨﯽ
ﻣﺤﻨﺖ ﮐﯽ ﮐﻤﺎﺋﯽ ﮐﯽ ﻗﺪﺭ ﮨﻮﺋﯽ ﮨﮯ
ﺳﭻ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺑﻐﯿﺮ ﻣﺤﻨﺖ ﮐﮯ ﺁﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﻣﺎﻝ ﺟﺎﺗﺎ ﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﺍﺳﯽ
ﺁﺳﺎﻧﯽ ﺳﮯ ﮨﮯ

Submit "آپ کی ہے یا باپ کی ہے" to Digg Submit "آپ کی ہے یا باپ کی ہے" to del.icio.us Submit "آپ کی ہے یا باپ کی ہے" to StumbleUpon Submit "آپ کی ہے یا باپ کی ہے" to Google

Categories
منتخب

Comments

  1. Rubab's Avatar
    بہت خوب۔ عمدہ بات ہے۔
  2. Arain's Avatar
    Quote Originally Posted by Rubab
    بہت خوب۔ عمدہ بات ہے۔
    شکریہ رباب سس
  3. Sabih's Avatar
    Paa ggg. Menu wi hun kujh shak ho riya eyyy tahady tyyy hahahaha
  4. Arain's Avatar
    Quote Originally Posted by Sabih
    Paa ggg. Menu wi hun kujh shak ho riya eyyy tahady tyyy hahahaha
    ہاہاہاہاہاہاہا کیسا شک ؟
  5. Kainat's Avatar
    بہت اچھی بات بتائی گئی ہے۔ ورنہ مال مفت دل بے رحم
  6. Ahsan_Yaz's Avatar
    بہت عمدہ اور سبق آموز بات ہے۔ بلاشبہ اپنی محنت کی چیز کی قدر کا احساس اور انداز ہی کچھ اور ہوتا ہے۔
  7. Arain's Avatar
    Quote Originally Posted by Kainat
    بہت اچھی بات بتائی گئی ہے۔ ورنہ مال مفت دل بے رحم

    اسی لیے کہتے ہیں
    " عیش تو باپ کے پیسوں پر ہی ہوتا ہے اپنے پیسوں سے تو ضرورتیں ہی پوری ہوتی ہیں"



    شکریہ
  8. Arain's Avatar
    Quote Originally Posted by Ahsan_Yaz
    بہت عمدہ اور سبق آموز بات ہے۔ بلاشبہ اپنی محنت کی چیز کی قدر کا احساس اور انداز ہی کچھ اور ہوتا ہے۔
    بجا فرمایا یاز بھائی
  9. Rose's Avatar
    خوبصورت شیئرنگ۔۔۔زبردست
  10. Arain's Avatar
    Quote Originally Posted by Rose
    خوبصورت شیئرنگ۔۔۔زبردست
    شکریہ .
  11. Amir Shahzad's Avatar
    بہت سبق آموز ہے بھئی
    ارائیں بھائی آپ بھی کچھ عمل کریں ایسے ہی سمندر کے بیچ میں سیر کر کے نا آجایا کریں
    ہاہاہاہا
  12. Arain's Avatar
    Quote Originally Posted by Amir Shahzad
    بہت سبق آموز ہے بھئی
    ارائیں بھائی آپ بھی کچھ عمل کریں ایسے ہی سمندر کے بیچ میں سیر کر کے نا آجایا کریں
    ہاہاہاہا
    ہاہاہاہاہاہا کوشش تو میں بھی بڑی کرتا ہوں پر دل تو بچہ ہے اور بچہ نادان ہوتا یے اسی لیے یہ لوگ مفت میں ہی کام لے لیتے ہیں

  13. ابو لبابہ's Avatar
    بہت ہی سبق آموز حکایت

    واقعی جب کمانے لگے تب جا کر پیسوں کی قدر جانی- پڑھنے کے زمانے میں تو شاہانہ انداز میں لٹایا کرتے تھے- کوئی فکر اور ذمہ داری نہیں تھی اور نہ ہی یہ احساس کہ پیسے کتنی مشکل سے آتے ہیں
  14. Arain's Avatar
    Quote Originally Posted by Khusroo
    بہت ہی سبق آموز حکایت

    واقعی جب کمانے لگے تب جا کر پیسوں کی قدر جانی- پڑھنے کے زمانے میں تو شاہانہ انداز میں لٹایا کرتے تھے- کوئی فکر اور ذمہ داری نہیں تھی اور نہ ہی یہ احساس کہ پیسے کتنی مشکل سے آتے ہیں
    بجا فرمایا آپ نے خسرو بھائی