View RSS Feed

Pardaisi

عشق کا کھیل برابر بھی تو ہو سکتا ہے

Rate this Entry
کوئی ٹکرا کے سبک سر بھی تو ہو سکتا ہے
میری تعمیر میں پتھر بھی تو ہو سکتا ہے


کیوں نہ اے شخص تجھے ہاتھ لگا کر دیکھوں
تو مرے وہم سے بڑھ کر بھی تو ہو سکتا ہے


تو ہی تو ہے تو پھر اب جملہ جمال دنیا
تیرا شک اور کسی پر بھی تو ہو سکتا ہے


یہ جو ہے پھول ہتھیلی پہ اسے پھول نہ جان
میرا دل جسم سے باہر بھی تو ہو سکتا ہے


شاخ پر بیٹھے پرندے کو اڑانے والے
پیڑ کے ہاتھ میں پتھر بھی تو ہو سکتا ہے


کیا ضروری ہے کہ باہر ہی نمو ہو میری
میرا کھلنا مرے اندر بھی تو ہو سکتا ہے


یہ جو ہے ریت کا ٹیلہ مرے قدموں کے تلے
کوئی دم میں مرے اوپر بھی تو ہو سکتا ہے


کیا ضروری ہے کہ ہم ہار کے جیتیں تابشؔ
عشق کا کھیل برابر بھی تو ہو سکتا ہے


عباس تابش

Submit "عشق کا کھیل برابر بھی تو ہو سکتا ہے" to Digg Submit "عشق کا کھیل برابر بھی تو ہو سکتا ہے" to del.icio.us Submit "عشق کا کھیل برابر بھی تو ہو سکتا ہے" to StumbleUpon Submit "عشق کا کھیل برابر بھی تو ہو سکتا ہے" to Google

Categories
Uncategorized

Comments