Pardaisi

اکـــــتوبــ ر پـھـــر اداس ہــــے

Rate this Entry
"اکـــــتوبـــر پـھـــر اداس ہــــے"
اجنبی سی راہوں میں
دور تک نگاہوں میں
بے رخی کا موسم ہے
آج پھر نگاہوں کو
بیتے پل کی پیاس ہے
پھر رہا ہوں در بدر
کسی معجزے کی آس ہے
ایسا لگتا ہے جیسے
اکــــتوبـــر پھــــر اداس ہــــے

بات تو کرے کوئی
ساتھہ تو چلے کوئی
خاموشی کا پہرا ہے
زخم دل کا گہرا ہے
کسی بہت ہی اپنے کی
آج پھر تلاش ہے
ایسے لگتا ہے جیسے
اکــــتوبـــر پھــــر اداس ہـــے



Submit "اکـــــتوبــ ر پـھـــر اداس ہــــے" to Digg Submit "اکـــــتوبــ ر پـھـــر اداس ہــــے" to del.icio.us Submit "اکـــــتوبــ ر پـھـــر اداس ہــــے" to StumbleUpon Submit "اکـــــتوبــ ر پـھـــر اداس ہــــے" to Google

Categories
Uncategorized

Comments