View RSS Feed

Pardaisi

  1. عشق کا کھیل برابر بھی تو ہو سکتا ہے

    کوئی ٹکرا کے سبک سر بھی تو ہو سکتا ہے
    میری تعمیر میں پتھر بھی تو ہو سکتا ہے


    کیوں نہ اے شخص تجھے ہاتھ لگا کر دیکھوں
    تو مرے وہم سے بڑھ کر بھی تو ہو سکتا ہے
    ...
    Categories
    Uncategorized
  2. شاہِیں

    شاہِیں


    کِیا میں نے اُس خاک داں سے کنارا
    جہاں رزق کا نام ہے آب و دانہ
    بیاباں کی خلوت خوش آتی ہے مجھ کو
    ازل سے ہے فطرت مری راہبانہ
    نہ باد بہاری، نہ
    ...
    Categories
    Uncategorized