PDA

View Full Version : why eeveryone is so depressed?



Faaizaa
24-03-2010, 07:40 PM
hi men apsay yeah puchna chahti hun k ahir kya waja hai k aj kal her shahs tension men rehta hai or bayskuuni hai her kisi ko ?thanks
faiza

SadafG
24-03-2010, 08:37 PM
dear frnd yaaar job tensionnsss pir ghar mai hum looog sahi care nain karaty or sub say aham wajay Allah ko bholtay ja rahahy hian aisa hi hai maray sath b hota hai k baty roo rahy hai us ki fikar zaida hai namaz nikal jayay isi tension main k is ko kya hoa hai bus yaaar life is very difficultttt

SadafG
24-03-2010, 08:39 PM
is ka sub say acha answer nosheen ji hi day sakty hain wasay yea tu busss dil ki bharassss samjh lo

Faaizaa
25-03-2010, 05:58 PM
thank u yeah hi best answer hai k dil ki bhrasss???nikalna
thanks

Nosheen Qureshi
11-04-2010, 05:04 PM
بہت سی چیزیں ہیں جو ہماری پریشانی کی وجہ بنتی ہیں، مذھب سے دوری ہمارے یقین اور ایمان کو کمزور کرتی ہے، دیگر وجوہات میں سب سے پہلے تو نفسانفسی اس کی ایک بڑی وجہ ہے، ہر کوئی اپنے لیے سوچتا ہے، ہم خود غرض ہوتے جارہے ہیں، اپنے لئے زندہ رہتے ہیں اپنے لئے سوچتے ہیں، ہر چیز پر صرف اپنا ہی حق سمجھتے ہیں, پیسے کی ایک دوڑ چل رہی ہے، ہم یہ بھول گئے ہیں کہ وقت سے پہلے اور نصیب سے زیادہ ہمیں کچھ نہیں مل سکتا، ہمارے پاس کسی کیلئے بھی وقت نہیں ہے، نہ ماں باپ کے پاس بچوں کیلئے نہ بچوں کے پاس اپنے والدین کیلئے، ہر کوئی اپنی ہی جگہ مصروف عمل ہے، ہر وقت ایک موازنہ چلتا رہتا ہے کہ فلاں کے پاس کیا کیا ہے اور ہم اس سے کتنے پیچھے ہیں، ایک احساس کمتری ہمارے ساتھ لگ گیا ہے، ہر وقت ہر طرف سے ملنے والی پریشان کن خبریں ہمیں آہستہ آہستہ دوسروں کے معاملہ میں بےحسی کا شکار بنا رہی ہیں، ہم کل کا سوچتے ہیں اور آج کو کھو رہے ہیں جس کا ہمیں احساس تک نہیں، ہم اپنی خوشیاں دوسروں سے چھپاتے ہیں اور ہر کسی کی ذاتی زندگی میں جھانکنا اپنا اولین فرض سمجھتے ہیں،
بیرونی دنیا میں رونما ہونے والے تغیرات بھی اس کی ایک وجہ ہیں، افراط و تفریت اس قدر بڑھ چکی ہے کہ نعمتوں کا سہی معنوں میں مزا لینے والے بہت کم رہ گئے ہیں، حرام کو حرام نہیں سمجھا جاتا، میڈیا چیزوں کو عجیب طریقے سے پیش کرتا ہے، ہم آہستہ آہستہ چیزوں کا صرف منفی رخ دیکھنے کے عادی ہوگئے ہیں، نمود و نمائش عام ہو گئ ہے جو کسی کے اندر فخر کا احساس بڑھا رہی ہے تو کسی میں جارحیت، ہم بہت سے معاملوں میں بے بس محسوس کرنے لگے ہیں، علم صرف کتابوں میں بند ہوگیا ہے ہم اس کو روزمرہ زندگی میں یہ کہہ کر فراموش کرنے لگے ہیں کہ جی یہ کتابی باتیں ہیں جو بھی مل رہا ہے جیسے بھی مل رہا ہے حق سمجھ کر وصول کر لو، دوسروں کی فکر مت کرو کوئی ہماری فکر کرتا ہے کیا?، ہم صرف سنانا چاہتے ہیں سننا نہیں، ہم اپنی فکر میں پڑ گئے ہیں اور یہ ہی ہماری پریشانی کی وجہ ہے۔
ہم دنیا بنانے میں اتنے مصروف ہیں کہ ہمیں بھول ہی گیا ہے کہ یہ فانی ہے اور ہمارا اصل ٹھکانہ کوئی اور ہے، ہمیں لگتا ہے کہ اللہ ہماری دعائیں نہیں سن رہا وہ ان کو نواز رہا ہے جنھیں نہیں نوازنا چاہئے، ہمیں یہ تو نظر آتا ہے کہ گلاس آدھا خالی ہے لیکن ہم یہ نہیں دیکھتے کہ وہ آدھا بھرا ہوا ہے، جو موجود ہے اس کا شکر کرنے کی بجائے ہم جو نہیں ملا اس کا غم مناتے رہتے ہیں،

GlobalPeace
20-05-2010, 01:45 AM
Please listen to Dr (Maulana) Hussain Sattar MD's talk on depression:

Body and Soul - Overcoming Depression

http://www.sacredlearning.org/general-talks/category

He is a Maulana, a Medical Doctor and a Shaykh in Naqshbandi-Mujaddid Tareeqa

Sara
20-05-2010, 02:08 AM
Please listen to Dr (Maulana) Hussain Sattar MD's talk on depression:

Body and Soul - Overcoming Depression

http://www.sacredlearning.org/general-talks/category



کافی دن بعد آپ کی پوسٹ دیکھی ۔۔کیا حال ہیں?

GlobalPeace
20-05-2010, 02:15 AM
کافی دن بعد آپ کی پوسٹ دیکھی ۔۔کیا حال ہیں?


Asslamo Allaikum Sister

No urdu on this laptop...Busy with a few Islamic projects and in the community and also had a baby girl in December

Alhumdolillah, how are you doing these days?