PDA

View Full Version : تذبذب



우스만
14-04-2009, 10:51 AM
السلام علیکم نوشین سس
میں یہاں آپ سے ایک مشورہ لینا چاہتا ہوں
مجھے اپنی زندگی اور رویے میں کچھ عدم توازن اور عدم تسلسل محسوس ہوتا ہے محفل میں یعنی چند لوگوں کے سامنے تو بہت کانفیڈنس ظاہر ہوتا ہے اکثر غلط بات کو بھی ہوں ڈیفنڈ کرتا ہوں جیسے وہی صحیح ہو شائد یہ مری ضدی طبیعت کی وجہ سے ہے لیکن جب اکیلے مین ہوتا ہوں تو اکثر ایسا لگتا ہے کہ میں غلط آدمی ہوں ہر کسی کو تنگ کرتا ہوں ۔۔۔۔۔۔ لیکن کبھی کبھی مجھ ایسا موڈ بھی طاری ہو جاتا ہے جب کوئی مجھے برا کہ رہا ہو تو مجھے سکون ملتا ہے کبھی میں خود ہی اپنی برائی کرنے لگتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔ اور پتا نہیں کیوں جب کسی سے کم دوستی ہو یعنی کم کم ملنا ہو تو بڑی اچھی چلتی ہے مگر جب کسی سے قریب ہو جاؤں تو اختلافات جنم لینے لگتے ہیں بد گمانیاں ہونے لگتی ہیں اکثر بلاوجہ کی بحث اور لڑائی اور بحث ہوتی ہے اسی لئے اکثر میں کسی سے زیادہ عرصہ قریب نہیں ہو پاتا
آپکے اس سلسلے میں کیا کمنٹس ہیں مجھے کبھی لگتا ہے کہ میں اوور کانفیڈنس ہوں کبھی مجھے لگتا ہے کہ کچھ اور ہے

والسلام
عثمان

Nosheen Qureshi
18-04-2009, 09:12 AM
آپ کی شخصیت کسی حد تک عدم استحکام کا شکار ہے، لگتا ہے کہ آپ بہت سی باتوں میں شدت پسندی سے کام لیتے ہیں، آپ اندر سے کیسے ہیں دراصل آپ نہیں چاہتے کہ کوئی آپ کو زیادہ قریب سے جانے اسی لئیے آپ اپنے تعلقات کو محدود رکھتے ہیں۔ غلط بات کا دفاع کرنے کی عادت کوئی ایسی انوکھی نہیں ایسا تو آج کل تقریبا ہر کوئی کرتا ہے اور مانتا بھی نہیں، فرق یہ ہے کہ آپ کو اس کا احساس بھی ہے اور اس پر اکیلے میں ندامت بھی ہوتی ہے جس کا ذکر آپ نے کیا ہے، کسی کے برا کہنے سے آپ کو تسکین کا جو وقتی احساس ہوتا ہے اس کی وجہ یہ ہو سکتی ہے کہ اس سے آپ کو دوسروں کی خود پر توجہ کا احساس خوشی دیتا ہو۔
انسان ہونے کی حیثیت سے ہم سب میں مثبت و منفی دونوں طرح کے رحجانات پائے جاتے ہیں ، کبھی ایک حاوی ہوجاتا ہے کبھی دوسرا، اس کا بہت حد تک انحصار ہمارے ماحول اور حالات سے مقابلہ کرنے کی صلاحیت پر ہوتا ہے، اپنی شخصیت کی مثبت تعمیر میں ہمارا ہاتھ سب سے زیادہ ہوتا ہے، کوشش کریں کہ مثبت کاموں کو بڑھائیں، اپنے حلقہ احباب میں مثبت سوچ رکھنے والے افراد کو جگہ دیں، اپنی کامیابیوں پر خوش ضرور ہوں لیکن خود کو یہ احساس دلاتے رہیں کہ اس میں کمال صرف آپ کی ذہانت کا ہی نہیں قسمت کا بھی ہے، اپنی کسی ناکامی یا شخصی خامی پر مایوس ہونے یا غصہ کرنے کی بجائے اس کے اسباب پر غور کریں اور جس حد تک آپ کے اختیار میں ہے اس کے اثرات کو کم کریں۔

Minha Malik
24-04-2009, 06:58 PM
اہا
عثمان

تم تو پکے پکے بھائی لگ رہے ہو میرے۔

8)


اور ٹھیک کہا نوشین جی نے
کہ جب ہم چاہتے ہیں کہ کوئی ہمیں قریب سے نہ جان پائے
تو ہم اپنے تعلقات کو محدود رکھتے ہیں۔

Mehero Ul Nisa Dar
24-04-2009, 07:02 PM
السلام علیکم نوشین سس
میں یہاں آپ سے ایک مشورہ لینا چاہتا ہوں
مجھے اپنی زندگی اور رویے میں کچھ عدم توازن اور عدم تسلسل محسوس ہوتا ہے محفل میں یعنی چند لوگوں کے سامنے تو بہت کانفیڈنس ظاہر ہوتا ہے اکثر غلط بات کو بھی ہوں ڈیفنڈ کرتا ہوں جیسے وہی صحیح ہو شائد یہ مری ضدی طبیعت کی وجہ سے ہے لیکن جب اکیلے مین ہوتا ہوں تو اکثر ایسا لگتا ہے کہ میں غلط آدمی ہوں ہر کسی کو تنگ کرتا ہوں ۔۔۔۔۔۔ لیکن کبھی کبھی مجھ ایسا موڈ بھی طاری ہو جاتا ہے جب کوئی مجھے برا کہ رہا ہو تو مجھے سکون ملتا ہے کبھی میں خود ہی اپنی برائی کرنے لگتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔ اور پتا نہیں کیوں جب کسی سے کم دوستی ہو یعنی کم کم ملنا ہو تو بڑی اچھی چلتی ہے مگر جب کسی سے قریب ہو جاؤں تو اختلافات جنم لینے لگتے ہیں بد گمانیاں ہونے لگتی ہیں اکثر بلاوجہ کی بحث اور لڑائی اور بحث ہوتی ہے اسی لئے اکثر میں کسی سے زیادہ عرصہ قریب نہیں ہو پاتا
آپکے اس سلسلے میں کیا کمنٹس ہیں مجھے کبھی لگتا ہے کہ میں اوور کانفیڈنس ہوں کبھی مجھے لگتا ہے کہ کچھ اور ہے

والسلام
عثمان
ہائے بری چھیتی یاد آیا پوچھنے کا۔۔ ۔ ۔ تم ناں پوچھتے تو میں پوچھ لیتی ہے ہاہاہاہا کیا حل بتایا ہے آپی نے

우스만
24-04-2009, 07:55 PM
اہا
عثمان

تم تو پکے پکے بھائی لگ رہے ہو میرے۔

8)
اور ٹھیک کہا نوشین جی نے
کہ جب ہم چاہتے ہیں کہ کوئی ہمیں قریب سے نہ جان پائے
تو ہم اپنے تعلقات کو محدود رکھتے ہیں۔

ji aapi ji na sirf lag raha hun balkay hun bhi
aur naosheen sis nay sab baten bilkul theek ki hain


ہائے بری چھیتی یاد آیا پوچھنے کا۔۔ ۔ ۔ تم ناں پوچھتے تو میں پوچھ لیتی ہے ہاہاہاہا کیا حل بتایا ہے آپی نے
parh lo bhaeeee naosheen aapi ka jwab main kia btaoon apko

aap kia poochtein wesay

Mehero Ul Nisa Dar
24-04-2009, 08:20 PM
ji aapi ji na sirf lag raha hun balkay hun bhi
aur naosheen sis nay sab baten bilkul theek ki hain


parh lo bhaeeee naosheen aapi ka jwab main kia btaoon apko

aap kia poochtein wesay
yahi jo tumne pocha

우스만
24-04-2009, 11:52 PM
yahi jo tumne pocha
hahahah

Fatima
24-04-2009, 11:57 PM
السلام علیکم نوشین سس
میں یہاں آپ سے ایک مشورہ لینا چاہتا ہوں
مجھے اپنی زندگی اور رویے میں کچھ عدم توازن اور عدم تسلسل محسوس ہوتا ہے محفل میں یعنی چند لوگوں کے سامنے تو بہت کانفیڈنس ظاہر ہوتا ہے اکثر غلط بات کو بھی ہوں ڈیفنڈ کرتا ہوں جیسے وہی صحیح ہو شائد یہ مری ضدی طبیعت کی وجہ سے ہے لیکن جب اکیلے مین ہوتا ہوں تو اکثر ایسا لگتا ہے کہ میں غلط آدمی ہوں ہر کسی کو تنگ کرتا ہوں ۔۔۔۔۔۔ لیکن کبھی کبھی مجھ ایسا موڈ بھی طاری ہو جاتا ہے جب کوئی مجھے برا کہ رہا ہو تو مجھے سکون ملتا ہے کبھی میں خود ہی اپنی برائی کرنے لگتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔ اور پتا نہیں کیوں جب کسی سے کم دوستی ہو یعنی کم کم ملنا ہو تو بڑی اچھی چلتی ہے مگر جب کسی سے قریب ہو جاؤں تو اختلافات جنم لینے لگتے ہیں بد گمانیاں ہونے لگتی ہیں اکثر بلاوجہ کی بحث اور لڑائی اور بحث ہوتی ہے اسی لئے اکثر میں کسی سے زیادہ عرصہ قریب نہیں ہو پاتا
آپکے اس سلسلے میں کیا کمنٹس ہیں مجھے کبھی لگتا ہے کہ میں اوور کانفیڈنس ہوں کبھی مجھے لگتا ہے کہ کچھ اور ہے

والسلام
عثمان
:(
میرے ساتھ بھی یہ مسئلہ ہے۔

우스만
25-04-2009, 12:30 AM
:(
میرے ساتھ بھی یہ مسئلہ ہے۔

تو پھر آپ کے مسئلے کا حل بھی نوشین سس کی اس ریپلائی میں ہے


آپ کی شخصیت کسی حد تک عدم استحکام کا شکار ہے، لگتا ہے کہ آپ بہت سی باتوں میں شدت پسندی سے کام لیتے ہیں، آپ اندر سے کیسے ہیں دراصل آپ نہیں چاہتے کہ کوئی آپ کو زیادہ قریب سے جانے اسی لئیے آپ اپنے تعلقات کو محدود رکھتے ہیں۔ غلط بات کا دفاع کرنے کی عادت کوئی ایسی انوکھی نہیں ایسا تو آج کل تقریبا ہر کوئی کرتا ہے اور مانتا بھی نہیں، فرق یہ ہے کہ آپ کو اس کا احساس بھی ہے اور اس پر اکیلے میں ندامت بھی ہوتی ہے جس کا ذکر آپ نے کیا ہے، کسی کے برا کہنے سے آپ کو تسکین کا جو وقتی احساس ہوتا ہے اس کی وجہ یہ ہو سکتی ہے کہ اس سے آپ کو دوسروں کی خود پر توجہ کا احساس خوشی دیتا ہو۔
انسان ہونے کی حیثیت سے ہم سب میں مثبت و منفی دونوں طرح کے رحجانات پائے جاتے ہیں ، کبھی ایک حاوی ہوجاتا ہے کبھی دوسرا، اس کا بہت حد تک انحصار ہمارے ماحول اور حالات سے مقابلہ کرنے کی صلاحیت پر ہوتا ہے، اپنی شخصیت کی مثبت تعمیر میں ہمارا ہاتھ سب سے زیادہ ہوتا ہے، کوشش کریں کہ مثبت کاموں کو بڑھائیں، اپنے حلقہ احباب میں مثبت سوچ رکھنے والے افراد کو جگہ دیں، اپنی کامیابیوں پر خوش ضرور ہوں لیکن خود کو یہ احساس دلاتے رہیں کہ اس میں کمال صرف آپ کی ذہانت کا ہی نہیں قسمت کا بھی ہے، اپنی کسی ناکامی یا شخصی خامی پر مایوس ہونے یا غصہ کرنے کی بجائے اس کے اسباب پر غور کریں اور جس حد تک آپ کے اختیار میں ہے اس کے اثرات کو کم کریں۔