PDA

View Full Version : شیزوفرینیا



Sajjad_Sarwar
09-03-2009, 01:12 PM
نوشین قریشی سے شیزوفرینیا کے متعلق سوال


آپ ہمیں شیزوفرینیا کے متعلق کچھ بتایئں خاص طور پر گھر کے افراد کو کیا کرنا ھے۔

Nosheen Qureshi
11-03-2009, 09:40 AM
شیزوفرینیا ایک دماغی عارضہ ہے، اس کے شکار افراد میں مختلف طرح کی علامات پائی جاتی ہیں، جس میں مختلف قسم کے اخباط، واہمے، عجیب و غریب رویہ اور غیر معمولی اطوار شامل ہیں۔
اس طرح کی کیفیت کم از کم ایک ماہ تک رہے اور اس میں کسی قسم کی تبدیلی نہ ہو اور اس کے ساتھ ساتھ 6 ماہ تک ان کی باقی معمول کی زندگی متاثر ہو، جیسا کہ ان کا کام کاج ،لوگوں سے ان کے تعلقات وغیرہ تو ہی اس کی تشخیص شیزوفرینیا کے طور پر کی جا سکتی ہے، یہ خیال رکھنا بھی ضروری ہے کہ یہ تمام علامات کسی دوا یا غیر قانونی ادویات کی وجہ سے نہ ہوں
غیر مناسب رویہ کا مظاہرہ کر سکتے ہیں (جیسے کسی کی وفات پر ہنسنا ، قہقہے لگانا)، عجیب قسم کا منہ کا زاویہ بنانا، رات کو دن اور دن کو رات کی طرح گزارنا
مختلف قسم کے اخباط کی وجہ سے مختلف چیزوں سے دور رہنا، جیسے یہ یقین کے دشمن نے کھانے میں زہر ملایا ہوا ہے، میں باہر نکلوں گا تو لوگ میرا پیچھا کریں گے وغیرہ
اپنی ذات کی طرف سے لا پروائی اختیار کرنا، ذندگی میں دلچسپی نہ لینا، یادداشت کی خرابی، مسائل کا حل سوچنے میں مشکل، ایک ہی عمل کو بار بار دہرانا، ایک جگہ بیٹھنا تو بیٹھے ہی رہنا یا فضول قسم کے کام مستقل انجام دیتے رہنا، اس چیز کا ادراک نہ ہونا کہ وہ کسی قسم کے مسائل کا شکار ہو رہے ہیں، اپنے واہموں اور اخباط کو حقیقت تصور کرنا وغیرہ
یہ لوگ بعض اوقات انتہائی سخت رویہ اختیار کر لیتے ہیں اور بالکل قابو میں نہیں آتے، کوئی بھی کسی بھی قسم کی بات نہیں مانتے، اداس رہتے ہیں، من گھڑت قصے کہانیاں بیان کرتے ہیں ، اپنی زات کو فراموش کر دیتے ہیں

Nosheen Qureshi
11-03-2009, 10:26 AM
اس کے علاج کے لئے عموما مریض کو ہسپتال میں داخل کرنے کی ضرورت پڑتی ہے، خاص طور پر جب علامات شدید ہوں، لیکن اس وقت درست علاج سے مریض کو کافی حد تک بہتر کیا جا سکتا ہے
کیونکہ وہ خود کو بالکل درست سمجھتے ہیں اور انھیں یقین ہوتا ہے کہ ان کے ساتھ وہ سب واقعات حقیقت میں پیش آ رہے ہیں اس لئے انھیں جھٹلا کر آپ انھیں خود سے دور تو کر سکتے ہیں لیکن ٹھیک نہیں کر سکتے
ادویات کے ساتھ ساتھ انھیں سب کا ساتھ بھی درکار ہوتا ہے، ان میں تحریک پیدا کی جاتی ہے، روزمرہ کے کام کاج میں شامل کیا جاتا ہے، پریشان کن خیالات سے نکلنے کی ترغیب دی جاتی ہے، رشتے نبھانے اور بات چیت کی مشکلات کے حل میں مدد دی جاتی ہے
باقاعدگی سے ان کے ساتھ سیشن کر کے انھیں زندگی میں شامل کرنے کی کوشش کی جاتی ہے، وہ کہاں غلط ہیں انہیں بڑی احتیاط سے بتایا جاتا ہے، غیر حقیقی خیالات کی جگہ حقیقت پسندی کو دی جاتی ہے، روزمرہ کے مسائل کے حل کی تحریک پیدا کی جاتی ہے
انھیں کام کاج کی ترغیب دی جاتی ہے اور آہستہ آہستہ روٹین کے کاموں میں شامل کیا جاتا، انفرادی توجہ سے یہ سب جلد ممکن ہو سکتا ہے، ان کے لئے اپنی مدد آپ کے تحت کام منتخب کئے جاتے ہیں، اگر گھر کے افراد اس سارے عمل میں شامل ہوں تو بہتری جلد آ سکتی ہے
انھیں کام کاج کی ترغیب دی جاتی ہے اور آہستہ آہستہ روٹین کے کاموں میں شامل کیا جاتا، انفرادی توجہ سے یہ سب جلد ممکن ہو سکتا ہے، ان کے لئے اپنی مدد آپ کے تحت کام منتخب کئے جاتے ہیں، اگر گھر کے افراد اس سارے عمل میں شامل ہوں تو بہتری جلد آ سکتی ہے، گھر کے افراد کو کوشش کرنی چاہئے کہ وہ مریض کو ادویات ضرور دیں، یہ دیکھ کر ادویات دینا چھوڑ دینا کہ اب اسے ان کی ضرورت نہیں مریض کے لئے خطرناک ثابت ہو سکتا ہے کیونکہ اس سے اس کی علامات واپس آ جاتی ہیں اور محنت برباد ہو جاتی ہے، کوشش کریں کہ گھر کا ماحول پرسکون رہے، اشتعال انگیز کاموںسے گریز کریں، مریض کو مکمل ساتھ کا یقین دیں، اس کا خود پر اعتماد بڑھائیں، اسے اپنی مرضی کرنے کی آزادی دیں اور تنقید کم سے کم کریں

mqali
11-03-2009, 11:12 AM
السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ


بھن اللہ اپکو جزا دے
میرے اسٹاف میں ایک شخص کے بھایی کو یہی بیماری
ھے تقریبا ۱۲ سال سے میں نے اپکی اس تحریر کی کاپی
اسکو دے دی اگر اپکے پاس مزید اسکا اور کویی حل ھے
تو تفصیلات سے اگاہ کریں
ثم جزاک اللہ